امن مذاکرات امریکی دباؤ سے شروع نہیں کیے، شمالی کوریا

امریکانے اشتعال انگیز بیانات دینا بند نہ کیے تو امن مذاکرات کو نقصان پہنچ سکتا ہے،بیان میںانتباہ

پیر مئی 12:08

پیانگ یانگ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 07 مئی2018ء) شمالی کوریا نے خبردار کیا ہے کہ امریکا یہ دعویٰ نہ کرے کہ یہ کمیونسٹ ریاست امریکی دباؤ کی وجہ سے امن مذاکرات کا حصہ بننے پر مجبور ہوئی ہے، ورنہ جزیرہ نما کوریا پر حالات دوبارہ کشیدہ بھی ہو سکتے ہیں۔

(جاری ہے)

غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق عالمی طاقتوں کے ساتھ مذاکرات کی بحالی کی وجہ امریکی پابندیاں یا عسکری دھمکیاں نہیں ہیں۔

امریکا اگر اس طرح کے اشتعال انگیز بیانات دینا بند نہیں کرے گا تو امن مذاکرات کو نقصان پہنچ سکتا ہے۔اس کمیونسٹ ملک کی وزرات خارجہ کی طرف سے کہا گیا کہ امریکا ایسے بیان دے کر دانستہ طور پر شمالی کوریا کو اشتعال دلا رہا ہے کہ اگر اس نے جوہری پروگرام مکمل طور پر ترک نہ کیا تو اس پر عائد عالمی پابندیاں ختم نہیں کی جائیں گی۔

متعلقہ عنوان :