سندھ ہائیکورٹ نے صائمہ قتل کیس کے معاملے پر ڈی آئی جی لاڑکانہ اور ایس ایس پی لاڑکانہ نے پیشرفت رپورٹ جمع کر ادی

پیر مئی 17:38

کراچی (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 07 مئی2018ء) سندھ ہائیکورٹ نے صائمہ قتل کیس کے معاملے پر ڈی آئی جی لاڑکانہ اور ایس ایس پی لاڑکانہ نے پیشرفت رپورٹ جمع کر ادی ۔ عدالت نے پولیس کارکردگی پر اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے کیس کا چالان متعلقہ عدالت میں جمع کرانے کا حکم دید یا ۔ سندھ ہائیکورٹ میں لاڑکانہ میں زیادتی کے بعد قتل ہونے والی صائمہ کے قتل اور زیادتی پر لیے گئے ازخود نوٹس پر سماعت ہوئی ۔

صائمہ قتل کیس کے معاملے پر ڈی آئی جی لاڑکانہ عبداللہ شیخ اور ایس ایس پی لاڑکانہ تنویر تنیو نے پیش رفت رپورٹ پیش کی ۔ رپورٹ میں بتایا گیا کہ صائمہ قتل کیس میں اغواء ، زیادتی ، اور قتل کی دفعات شامل کی گئی ہیں ۔ تفتیش کے دوران جیو فینسنگ کی مدد سے دو ملزمان کو گرفتار کیا گیا ، جنہوں نے دوران تفتیش جرم کا اعتراف بھی کر لیا ہے ۔

(جاری ہے)

رپورٹ میں مزید بتایا گیا کہ مقتول بچی صائمہ اور گرفتار دونوں ملزمان کے ڈی این اے کے نمونے ٹیسٹ کے لیے بھیج دیئے ہیں ۔

ملزمان کا لاڑکانہ میں واقع انسداد دہشت گردی کی خصوصی عدالت سے ریمانڈ بھی لے لیا گیا ہے جبکہ ملزمان سے مزید تفتیش کا عمل جاری ہے ۔ عدالت نے پولیس رپورٹ اور کارکردگی پر اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے انہیں کیس کا چالان متعلقہ عدالت میں جمع کرانے کا حکم دیا ۔