قلم و علم اور معاشرے کے دیگر طبقات کے درمیان ہم آہنگی اور روابط قائم کرنے کا فریضہ خوش اسلوبی سے سر انجام دیں ،احمد فاروق بازئی

علم کے ساتھ انسانی اقدار اور دیگر مثبت پہلوئوں کی بھی نشوونما جاری ہے جو قومیں تعلیم اور علم کو اپنا شعار بناتی ہیں وترقی کا زینہ تیزی سے چڑھتی چلی جاتی ہیں،وائس چانسلر بیوٹمز

پیر مئی 20:39

کوئٹہ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 07 مئی2018ء) تعلیمی ادارے قومی ترقی میں انتہائی موثر کردار ادا کر سکتے ہیں اگر وہ اہل قلم و علم اور معاشرے کے دیگر طبقات کے درمیان ہم آہنگی اور روابط قائم کرنے کا فریضہ خوش اسلوبی سے سر انجام دیں بحیثیت بلوچستان کی بہترین جامعہ بیوٹمز اپنی تعلیمی اور قومی ذمہ داریوں سے پوری طرح واقف ہے جس سے معاشرے میں علم کے ساتھ ساتھ انسانی اقدار اور دیگر مثبت پہلوئوں کی بھی نشوونما جاری ہے جو قومیں تعلیم اور علم کو اپنا شعار بناتی ہیں وترقی کا زینہ تیزی سے چڑھتی چلی جاتی ہیں۔

کوئٹہ ادبی میلہ سے صاحبِ علم و قلم بشمول شعراء ،مصنفین و محققین، مصورین، ادکار، ہدایت کار،، ڈرامہ وفلم نگار ،گلوگار، افسانہ نگار اور دیگر فنون لطیفہ سے وابستہ قد آور شخصیات کو طلباء کی صورت ہمارے مستقبل سے متعارف کرایا جا رہا ہے جس سے نہ صرف ادبی سرگرمیوں کو مزید تقویت ملے گی بلکہ ہماری ثقافت ،معاشرتی اقدار اور دیگر علوم نوجوان نسل تک منتقل کرنے میں بھی مدد ملے گی ان خیالات کا اظہار وائس چانسلر بیوٹمز احمد فاروق بازئی نے بیوٹمز میں جاری کوئٹہ ادبی میلہ کی افتتاحی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔

(جاری ہے)

تاریخی کوئٹہ ادبی میلے کا انعقاد بلو چستان یونیورسٹی آف انفا رمیشن ٹیکنالوجی انجینئرنگ ا ینڈ مینجمنٹ سائنسز میں ہو رہا ہے ادبی میلہ پیر تا منگل جاری رہے گا جس میں ملک بھر سے معروف نا مورصحافی، مصور ،مصنف ،ادکار، ہدایت کار،، ڈرامہ وفلم نگار،گلوگار ،شعراء ، افسانہ نگار اور دیگر اہم شخصیات شریک ہیں جس میں معروف شاعر امجد اسلام امجد، ادا کارہ زیبا بختیار، ایوب کھوسہ، جمال شاہ،عبداللہ جان غزنوی،فاروق مینگل،ماہر اقتصادیات ڈاکٹر قیصر بنگالی،، سمیت دیگر مہمانوں اور طلباء نے شرکت کی جبکہ کوئٹہ ادبی میلہ کی مہمان خصوصی قائم مقام گورنر بلوچستان و سپیکر بلوچستان اسمبلی محترمہ راحیلہ درانی تھی جنہوں نے ادبی میلہ کے مختلف سیشنز کا دورہ کیا جبکہ اس دوران بیوٹمز میں بلو چستان کی تاریخ کا سب سے بڑ ا کتب میلہ کابھی دورہ کیا جس میں ملک بھر سے 40 سے زاہدمعر وف پبلیشر شرکت کر رہے ہیں جبکہ تاریخ ،سائنس ، ٹیکنالو جی ، انجیرنگ ، فنون لطفیہ ،معاشر ت ، اقتصا دیات ،انسانی معاشرے اور تہذیب ، ثقافت اور دیگر علوم پر ایک لاکھ سے زاہد کتب رکھی گئی ہیں ۔

کوئٹہ ادبی میلہ میں مختلف اہم موضوعات پر طلباء کی رہنمائی کے لئے سیشنز کا انعقاد کیا گیا جبکہ موسیقی ،اداکاری ، فلم پروڈکشن اور ہدایت کاری کے موضوعات اور مختلف کتب کی رونمائی پر بھی خصوصی سیشنز منعقد ہوئے جبکہ مصوری کے فن پاروں کی نمائش کا خصوصی اہتمام کیاگیا بعد ازاں ملک بھر سے آئے ہوئے نامور شعراء کے مشاعرے کا بھی انعقاد کی گیا جبکہ وائس چانسلر بیوٹمز احمد فاروق بازئی نے ملک بھر سے آئے ہوئے شرکاء کے اعزاز میں اعشائیہ دیا۔