اٹھارہ ہزاری ،سابق مقامی ایم پی اے فیصل حیات جبوآنہ نے پریذائڈنگ حملہ کیس میں گرفتاری پیش کر دی

پیر مئی 20:48

اٹھارہ ہزاری (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 07 مئی2018ء) سابق مقامی ایم پی اے فیصل حیات جبوآنہ نے پریذائڈنگ حملہ کیس میں گرفتاری پیش کر دی انہوں نے گزشتہ روز علاقہ میجسٹریٹ جھنگ محمد رفیق کی عدالت میں خود کو سرنڈر کرتے ہوئے اپنی گرفتاری دی جس پر انہیںجھنگ جیل بھیج دیا گیا18فروری 2008کے جنرل الیکشن جس میں فیصل حیات جبوآنہ دوسری بار امیدوار بنے کے موقع پر پولنگ اسٹیشن رشید پور کے پریذائیڈنگ آفیسر نے اپنے صوابدیدی ا ختیارکے تحت انہیں اور ان کے ایک عزیز اسد علی کو عدم موجودگی میںایک ماہ قید کی سزاء دی تھی جس پر عملدرآمد نہ ہواسابق ایم پی اے اور ان کے عزیز پر پولنگ کے روزدھاندلی کے مبینہ شبہ میں پریذائیڈنگ افسر شوکت کپلانہ پر حملہ کر کے اسے زدوکوب کرنے کا الزام تھا شوکت کپلانہ واپڈامیں کمرشل اسسٹنٹ اور ضلعی چیئرمین بابر علی خان سیال جوکہ پہلے مذکورہ سابق ایم پی اے کے سیاسی حریف تھے کے مبینہ عزیز ہیں فیصل حیات جبوآنہ ق لیگ کے دور میں پنجاب اسمبلی کے سب سے کم عمر ممبر رہے ان کے والد نواب غضنفر علی خان مرحوم بھی دو بار ایم پی اے بنے ان کے بھائی منظر عباس جبوآنہ نے بتایا کہ سزاء کے خلاف اپیل کیلئے سرنڈر کرنا ضروری تھافیصل جبوآنہ نے فیصلہ کے احترام میں گرفتاری دی ہے انشاء اللہ وہ جلد سرخرو ہو کر عوام کے درمیان ہوں گے حلقہ کے کارکنان و سپورٹرز کو پریشان نہیں ہونا چاہیے۔