بھارت،مسلم یونی ورسٹی علی گڑھ آزادی کے نعروں سے گونج اٹھی،وڈیو وائرل

گرفتار ملزم امیت گوسوامی کے خلاف راسوکا قانون کے تحت کارروائی کی جائے،طلباء تنظیم کا مطالبہ 16رکنی کمیٹی حالات ساز گار بنانے،امن و امان کی فضا برقرار رکھنے میں اپنا کردار ادا کریگی، اے ایم یو انتظامیہ

پیر مئی 21:43

علی گڑھ(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 07 مئی2018ء) بھارت کی مسلم یونی ورسٹی علی گڑھ میں آزادی کے نعرے گونج اٹھے،وڈیو وائرل ہو گئی، گرفتار ملزمامیت گوسوامی کے خلاف راسوکا قانون کے تحت کارروائی کی جائے،اے ایم یو انتظامیہ نے 16رکنی کمیٹی تشکیل دیدی ہے جو حالات کو ساز گار بنانے اور امن و امان کی فضا برقرار رکھنے میں اپنا کردار ادا کریگی۔ بھارتی میڈیا کے مطابقمسلم یونیورسٹی علی گڑھ کے طلبہ تنظیم کے ہال میں نصب بانی پاکستان محمد علی جناح کی تصویر ہٹائے جانے پر ہنگاموں کے دوران سوشل میڈیا پر وڈیو وائر ل ہورہی ہے جس میں آزادی کے نعرے لگاتے ہوئے طلبائ نظر آرہے ہیں۔

اس وڈیو کے بارے میں دعویٰ کیا جارہا ہے یہ اے ایم یو کا ہوسکتا ہے۔ اس وڈیو میں مظاہرہ کرنے والے طلبہ نے ملک کے خلاف نعرے لگائے۔

(جاری ہے)

وڈیو سے ظاہر ہوتا ہے کہ یہ بابائے سید گیٹ پر بنائی گئی ہے۔ پولیس نے بتایا کہ وڈیو کی تحقیقات شروع کردی گئی ہے اور جلد اس کی حقیقت سے آگاہ کیا جائیگا۔ پولیس نے جناح کی تصویر کی توہین اورہنگامہ برپا کرنے کے الزام میں ہندونواز طلبا تنظیم کے رہنما امیت گوسوامی اور یوگیش واشنے کو گرفتار کرکے جیل بھیج دیا۔

طلبہ کا کہنا ہے کہ ملزمان کیخلاف’’ راسوکا‘‘ قانون کے تحت کارروائی کی جائے۔ اے ایم یو میں پھیلی کشیدگی کے پیش نظر امتحانات ملتوی کردیئے گئے ہیں۔یونیورسٹی کے ترجمان نے کہا کہ امتحانا 12مئی سے شروع ہونگے۔اے ایم یو انتظامیہ نے 16رکنی کمیٹی تشکیل دیدی ہے جو حالات کو ساز گار بنانے اور امن و امان کی فضا برقرار رکھنے میں اپنا کردار ادا کریگی۔