انتخابات سے قبل شاہ محمود قریشی کے لیے بڑی خوشخبری آ گئی

ملتان کی نئی حلقہ بندیوں کی وجہ سے شاہ محمود قریشی اور ان کے بیٹے زین قریشی کی پوزیشن مضبوط ہوگئی

Muqadas Farooq مقدس فاروق اعوان منگل مئی 12:42

انتخابات سے قبل شاہ محمود قریشی کے لیے بڑی خوشخبری آ گئی
ملتان(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 08 مئی2018ء) نئی حلقہ بندیوں کی وجہ سے پاکستان تحریک انصاف کے رہنما شاہ محمود قریشی اور انکے بیٹے زین قریشی کی پوزیشن مضبوط ہوگئی۔۔ شاہ محمود قریشی کے مخالف سمجھے جانیوالے علاقے نئی حلقہ بندیوں سے خارج کر دئیے گئے ہیں۔ تفصیلات کے مطابق معروف کالم نگار خالد مسعود خان کا اپنے ایک کالم ’اللہ خیر کرے‘ میں کہنا ہے کہ جوں جوں الیکشن قریب آ رہے ہیں۔

الیکشن کے امیدوار تیزی پکڑتے جا رہے ہیں۔اور اس حوالے سے شاہ محمود قریشی بہت خوش نظر آ رہے ہیں۔اور ان کی خوشی میں دن بدن اضافہ ہوتا جا رہا ہے۔۔شاہ محمود قریشی کو پہلی خوشی یہ ملی کہ جاوید ہاشمی خودبخود ان کے راستے سے ہٹ گئے۔شاہد محمود قریشی ملتان سے 3 نشستوں پر امیدوار ہیں۔ایک قومی نشست جب کہ 2 صوبائی نشستیں ہیں۔

(جاری ہے)

قومی نشست پر تو وہ محض اس لیے امیدوار ہیں کیونکہ عرصہ دراز سے شاہ محمود قرشی قومی اسمبلی کی نشست پر الیکشن لڑ رہے ہیں۔

پہلی این اے 148 موجود این اے 157 پر وہ قومی اسمبلی کے الیکشن لرٹے رہے ہیں۔2013ء میں ہونے والے عام انتخبات میں وہ حلقہ این اے 150 یعنی کے مجودہ حلقہ این اے 156 کے امیدوار تھے اور وہاں سے الیکشن جیتے بھی تھے۔جب کہ وہ اپنے آبائی حلقے سے مسلم لیگ ن کے دودھ فروش امیدوار عبدالغفار ڈوگر سے تقریبا 70ہزار ووٹوں سے ہار گئے تھے۔اب اس حلقے سے شاہ محمود قریشی کے بیٹے زین قریشی امیدوار ہیں۔

اور اس حلقے سے شاہ محمود قریشی کے لیے ایک اچھی خبر آ گئی ہے۔اب حلقہ این اے 157 اور حلقہ این اے 158دونوں میں ایسی تبدیلیاں آئی ہیں جو شاہ محمود قریشی کے لیے خوش آئیند ہیں۔کیونکہ شاہ محمود قریشی کے مخلاف علاقے اور یونین کونسلز نئی حلقہ بندیوں سے خارج ہو گئے۔اس حساب اب یہ حلقہ شاہ محمود قریشی اور ان کے بیٹے زین قریشی کے لیے پہلے کی نسبت بہتر ثابت ہو گا۔اس لیے امید ہے کہ زین قریشی کے لیے پہلا الیکشن اتنا خراب ثابت نہیں ہو گا،اور دوسری طرف یہ الیکشن ان کے مخلاف امیدوار غفار ڈوگر کے لیے 2013 کے انتخابات جیسا آسان نہیں ہو گا۔