ڈاکٹرزمیرےوالد کی صحت یابی پر مطمئن ہیں،بیٹا احسن اقبال

احمد اقبال کاوالد کی صحتیابی کی دعا کرنے پرعوام کا شکریہ،ملک بھرکےلوگوں نےدعا اورٹیلی فون کالزکیں۔بیٹا احمد اقبال کی میڈیا سے گفتگو

sanaullah nagra ثنااللہ ناگرہ منگل مئی 16:02

ڈاکٹرزمیرےوالد کی صحت یابی پر مطمئن ہیں،بیٹا احسن اقبال
لاہور(اُردوپوائنٹ اخبارتازہ ترین۔08 مئی 2018ء) : وفاقی وزیرداخلہ احسن اقبال کے بیٹے احمد اقبال نےوالد کی صحت یابی کی دعا کرنے پرعوام کا شکریہ ادا کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ڈاکٹرزمیرےوالد کی صحت یابی پر مطمئن ہیں۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق وزیرداخلہ احسن اقبال کے بیٹے احمد اقبال نے اپنے والد کی صحت یابی کیلئے دعاؤں پرعوام کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ ملک بھر کے لوگوں نےدعا اور ٹیلی فون کالز کیں۔

انہوں نے نجی ٹی وی کوبتایا کہ ڈاکٹرزمیرےوالد کی صحت یابی پر مطمئن ہیں۔ اب فکر کرنے والی کوئی بات نہیں ہے۔ واضح رہے وفاقی وزیرداخلہ احسن اقبال پرعوامی جلسے شکرگڑھ کی تحصیل کنجرورمیں ملزم عابد حسین نے فائرنگ کردی۔تاہم وہاں موجود سکیورٹی اہلکارو ں نے ملزم کو پکڑ کرحراست میں لے لیا۔

(جاری ہے)

جبکہ احسن اقبال کوفوری ہسپتال منتقل کیا گیااور طبی امدادکے بعدلاہور سروسز ہسپتال میں منتقل کیا گیا۔

جہاں پرڈاکٹرز کی ٹیم نے احسن اقبال کا مکمل معائنہ کرنے بعد آپریشن کیا۔۔احسن اقبال کامیاب آپریشن کے بعد ابھی سروسز ہسپتال میں ہی زیرعلاج ہیں۔ حکومتی عہدیدران کا کہنا ہے کہ وزیرداخلہ احسن اقبال اب خیریت سے ہیں۔تاہم ان کا علاج ابھی چل رہا ہے۔ پولیس رپورٹ میں ملزم عابد سے متعلق یہ بات سامنے آئی ہے کہ ملزم نے احسن اقبال پردیسی ساختہ پستول 30بورسے ایک فائر کیا ۔

گولی احسن اقبال کے دائیں بازور پرلگ کرناف کے نیچے پیٹ میں چلی گئی تھی۔ملزم نے 15گز کے فاصلے سے گولی چلائی۔ملزم عابدویرم گاؤں کا رہائشی ہے۔ملزم عابد کے 2بھائی ہیں والد کا نام محمد حسین ہے۔ملزم عابد حسین پرچون کی دکان پرکام کرتا ہے۔ملزم کی تاریخ پیدائش 13مئی 1995ء ہے۔ ملزم عابد دبئی بھی جا چکا ہے۔ جبکہ ڈی سی ناروال کا کہنا ہے کہ ملزم پرپہلے بھی تھانے میں ایک مقدمہ درج ہوا ہے۔

پولیس کی ٹیم ملزم سے متعلق ابھی مزید تحقیقات کررہی ہے۔ ملزم عابد کوانسداد دہشتگردی عدالت میں پیش کیا گیا۔ عدالت نے ملزم کودس روزہ جسمانی ریمانڈ پرپولیس کے حوالے کردیا ہے۔دوسری جانب حکومت کی جانب سے احسن اقبال پرحملے کی تحقیقات کیلئے ایڈیشنل آئی جی سی ٹی ڈی رائے طاہر کی سربراہی میں جے آئی ٹی بھی تشکیل دی گئی ہے۔جے آئی ٹی نے بھی کیس کی تحقیقات شروع کردی ہیں۔