پاکستان کسٹم کوئٹہ عملے نے 2017-18 کے 18 ارب کے ٹارگٹ کو پہلی10 ماہ میں مکمل کرلیا

18 ارب 50 کروڑ روپے کا ریونیو اکٹھا کر کے قومی خزانے میں جمع کر ادیا

منگل مئی 21:33

․ کوئٹہ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 08 مئی2018ء) پاکستان کسٹم کوئٹہ کے عملے نے 2017-18 کے 18 ارب کے ٹارگٹ کو پہلی10 ماہ میں مکمل کر تے ہوئے 18 ارب 50 کروڑ روپے کا ریونیو اکٹھا کر کے قومی خزانے میں جمع کر ادیا کلکٹر کسٹم کوئٹہ اشرف علی کی خصوصی ہدایت پر ایڈیشنل کلکٹرز سمیع الحق ، زبیر شاہ اور دیگر افسران نے اسٹاف کے ہمراہ دن رات محنت کر کے فیڈرل بورڈ آف ریونیو سے ملنے والے ٹارگٹ کو سال کے 10 ماہ کی قلیل مدت میں مکمل کر کے ماڈل کلکٹر یٹ کسٹم کوئٹہ نے ریکارڈ قائم کر دیا ہے 18 ارب روپے کے ٹارگٹ کو 12 ماہ کے عرصے میں مکمل ہونا تا لیکن کسٹم کے عملے نے ٹیم ورک اور بہتر حکمت عملی کے تحت10 ماہ میں 18 ارب 50 کروڑ سے زائد ریونیو اکٹھا کر کے قومی خزانے میں جمع کرایا ہے جس میں کسٹم ڈیوٹی کی مد میں 5 ارب33 کروڑ کو عبور کر تے ہوئی7 ارب20 کروڑ روپے کا ریونیو حاصل کیا جبکہ گزشتہ برس2016-17 کے ان دنوں میں 4 ارب 30 کروڑ روپے وصول کئے گئے تھے اس طرح رواں سال 35 فیصد زائد ریونیو وصول کیا اسی طرح سیل ٹیکس کی مد میں6 ارب25 کروڑ کے ٹارگٹ کو کراس کر تے ہوئی7 ارب 86 کروڑ سے زائد رقم وصول کی جبکہ گزشتہ برس 5 ارب 82 کروڑ روپے جمع کئے گئے تھے اس طرح رواں سال 26 فیصد زائد وصولی کی گئی فیڈرل ایکسائز ڈیوٹی کی مد میں 30 کروڑ سے زائد رقم جمع ہوئی جو ٹارگٹ سے پانچ کروڑ روپے زائد ہے انکم ٹیکس میں3 ارب روپے سے زائد رقم وصول کی گئی جبکہ ٹارگٹ دو ارب روپے کا تھا ماڈل کلکٹریٹ کسٹم کوئٹہ کے کلکٹر اشرف علی نے ’’ آن لائن ‘‘ سے بات چیت کر تے ہوئے کہا ہے کہ فیڈرل بورڈ آف ریونیو سے ملنے والے سالانہ ٹارگٹ کو10 ماہ کی قلیل مدت میں کسٹم کے افسران اور دیگر اسٹاف نے جس طرح متحد ہو کر اپنی صلاحیتوں کو بروئے کار لا تے ہوئے ہدف کو عبور کیا ہے وہ قابل تحسین عمل ہے اس بہتر کارکردگی پر تمام افسران اور عملے کو مبارکباد دیتا ہوں اور مجھے امید ہے کہ آنیوالے وقت میں مزید محنت کر کے زیادہ سے زیادہ ریونیو اکٹھا کر کے قومی خزانے میں جمع کراکر ملک کی معیشت کو مضبوط بنانے میں کوئٹہ کسٹم اپنا بھر پور کردار ادا کرے گا انہوں نے کہا ہے کہ ہماری کوشش ہے کہ سمگلنگ کی روک تھام کو یقینی بنانے کے ساتھ ساتھ ریونیو میں بھی اضافہ کرے تاکہ لو گوں کو زیادہ سے زیادہ سہولیات مل سکے اور ہمارا ملک معاشی طور پر مضبوط ہو سکے ۔