سعودی خواتین آئندہ ماہ آزادانہ گاڑی چلانے کے لیے تیار

سعودی عرب میں خواتین گلے ماہ سے قانونی طور پر گاڑی چلا سکیں گیں

Sadia Abbas سعدیہ عباس بدھ مئی 13:51

سعودی خواتین آئندہ ماہ آزادانہ گاڑی چلانے کے لیے تیار
ریاض (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 09 مئی2018ء) سعودی عرب میں خواتین کے آزادانہ گاڑیاں چلانے میں صرف ڈیڑھ ماہ کا عرصہ رہ گیا ہے اور حکومت نے انھیں 24 جون سے ڈرائیونگ شروع کرنے کی اجازت دینے کا اعلان کردیا ہے۔مزید تفصیلات کے مطابق میڈیارپورٹس سے حاصل وہنے والی معلومات کے مطابق سعودی عرب کے محکمہ ٹریفک کے ڈائریکٹر جنرل محمد البسامی نے ایک بیان میں کہا کہ خواتین کے کاریں چلانے کے لیے درکار تمام تقاضوں کو پورا کردیا گیا ہے۔

18 سال اور اس سے زیادہ عمر کی خواتین ڈرائیونگ لائسنس کے حصول کے لیے درخواستیں دے سکیں گی۔ واضح رہے کہ سعودی شاہ سلمان بن عبدالعزیز نے ستمبر 2017ء میں ایک شاہی فرمان کے ذریعے خواتین کو آئندہ ماہ جون سے کاریں چلانے کی اجازت دے دی تھی اور ان کے گاڑیاں چلانے پر کئی عشروں سے جاری پابندی ختم کردی تھی۔

(جاری ہے)

اس فرمان کے بعد سے خواتین کو کار چلانے کی تربیت دینے کے لیے بھی اقدامات کیے گئے ہیں اور سعودی عرب کے پانچ شہروں میں ڈرائیونگ اسکول قائم کیے گئے ہیں۔

وہاں بیرون ملک سے کاریں چلانے اور لائسنس یافتہ سعودی خواتین کو ٹرینر مقرر کیا جا رہا ہے۔محمد البسامی کے بیان کے مطابق بیرون ملک سے ڈرائیونگ لائسنس کی حامل خواتین ایک الگ عمل کے ذریعے مقامی لائسنس کے حصول کے لیے درخواست دے سکیں گی اور ان کی کار چلانے کی مہارت کی جانچ کی جائے گی۔یہ کوئی راز کی بات نہیں ہے کہ بہت سی سعودی خواتین کے پاس بیرون ملک سے حاصل کردہ ڈرائیونگ لائسنس موجود ہیں۔

ا س لیے ایسی تمام خواتین جن کے پاس بیرون ممالک کے ڈرائیونگ لائسنس موجود ہیں انھیں مزید ٹریننگ لینے کی ضرورت نہیں ہے ، وہ اپنا غیر ملکی ڈرائیونگ لائسنس دکھا کر سعودی ڈرائیونگ لائسنس حاصل کر سکتی ہیں ۔ تاہم اس کے لیے ان کی ڈرائیونگ کی مہارت کا ٹیسٹ لیا جائے گا ۔ جس پر پورا اترنے کے بعد ہی ان خواتین کو سعودی ڈرائیونگ لائسنس جاری کیے جائیں گے ۔