چیف جسٹس نے آرمی پبلک سکول کیس سے متعلق اہم حکم دے دیا

چیف جسٹس نے آرمی پبلک سکول کیس سے متعلق جوڈیشل کمیشن بنانے کا حکم دے دیا

Muqadas Farooq مقدس فاروق اعوان بدھ مئی 17:29

چیف جسٹس نے  آرمی پبلک سکول کیس سے متعلق اہم حکم دے دیا
پشاور(اردو پوائنٹ تازہ ترین اخبار۔09مئی 2018) چیف جسٹس میاں ثاقب نثار نے سانحہ آرمی پبلک سکول کیس سے متعلق جوڈیشل کمیشن بنانے کا حکم دے دیا۔ تفصیلات کے مطابق آج چیف جسٹس آف پاکستان نے خیبر پختونخوا کا دورہ کیا۔ سپریم کورٹ پشاور رجسٹری میں آرمی پبلک سکول سانحہ کیس کی سماعت ہوئی۔کیس کی سماعت کے دوران چیف جسٹس میاں ثاقب نثار نے اہم حکم دےد یا۔

دوران سماعت چیف جسٹس میاں ثاقب نثار نے آرمی پبلک کیس سے متعلق جوڈیشنل کمیشن بنانے کا حکم دےد یا ہے۔۔چیف جسٹس نے کہا ہے کہ دو ماہ کے اندر اس کی مکمل رپورٹ پیش کی جائے۔یاد رہے کہ 16 دسمبر 2014 کو دہشت گردوں نے آرمی پبلک سکول کو دہشت گردی کا نشانہ بنایا تھا۔جس میں 130 ننھے طلباء شہید ہو گئے تھے۔جب کہ کئی طلباء زخمی بھی ہو گئے تھے۔

(جاری ہے)

اور شہید ہونے والوں میں سکول کا عملہ بھی شامل تھا۔

اس واقعے نے پورے پاکستان کو ہلا کر رکھ دیا تھا۔اور آج بھی پاکستانی قوم اس واقعہ پر غمگین ہے۔تاہم آج چیف جسٹس نے خیبرپختونخوا کے دورے پر سانحہ آرمی پبلک سکول کیس کی سماعت کے دوران اہم فیصلہ کرتے ہوئے جوڈیشل کمیشن بنانے کا حکم دے دیا ہے۔محکمہ تعلیم خیبرپختونخوا نے تعلیم سے متعلق رپورٹ سپریم کورٹ پشاور رجسٹری میں پیش کی۔سیکرٹری تعلیم خیبر پختونخوا کا کہنا تھا کہ اس بار تعلیم کے بجٹ میں 16 فیصد اضافہ کریں گے۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ پشاور کے سکولوں میں 28215 اساتذہ کی ضرورت ہے۔سیکرٹری تعلیم نے چیف جسٹس میاں ثاقب نثار کے سامنے اس بات کا دعوی بھی کیا ہے کہ 2022ء تک کوئی بھی بچہ تعلیم کے بغیر نہیں رہے گا۔۔چیف جسٹس آف پاکستان نے پشاور میں بند راستے کھولنے کا بھی حکم دےد یا ہے۔۔چیف جسٹس کا مزید کہنا تھا کہ ہمارا کام بہتری لانا ہے جب کہ حکومت کا کام ہے کہ وہ بہتری کے لیے لائے عمل طے کریں۔