تعلیمی اصلاحات وقت کی ضرورت ہیں مگر ہزاروں اساتذہ کو اچانک اور غیر قانونی طریقہ سے بے دخل کرنا کسی صورت تسلیم نہیں کیا جا سکتا‘حکومتی تعلیمی اصلاحات کو قدر کی نگاہ سے دیکھتے ہیں مگر ہزاروں اساتذہ کو اچانک اور غیر قانونی طریقہ سے بے دخل کرنا کسی صورت تسلیم نہیں کیا جا سکتا

پیپلز پارٹی آزادکشمیر کے مرکزی رہنما صاحبزادہ محمود کی میڈیا سے گفتگو

بدھ مئی 22:27

مظفرآباد(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 09 مئی2018ء) پیپلز پارٹی آزادکشمیر کے مرکزی رہنما و سابق ایڈیشنل ایڈووکیٹ جنرل صاحبزادہ محمود نے کہا ہے کہ تعلیمی اصلاحات وقت کی ضرورت ہیں مگر ہزاروں اساتذہ کو اچانک اور غیر قانونی طریقہ سے بے دخل کرنا کسی صورت تسلیم نہیں کیا جا سکتا۔حکومتی تعلیمی اصلاحات کو قدر کی نگاہ سے دیکھتے ہیں مگر اہلیت کا پیمانہ بھی درست ہونا ضروری ہے ۔

(جاری ہے)

گزشتہ روز میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ اہلیت پر پورا نہ اترنے والے اساتذہ کو ان کی تمام مراعات سمیت عزت واحترام کے ساتھ سبکدوش کیا جائے اس وقت محکمہ علیم میں تعلیمی ایمرجنسی کی ضرورت ہے ۔این ٹی ایس اہلیت پر کھنے کا اچھا پیمانہ ہے مگر اس پر بھی انگلیاں اُٹھ رہی ہیں ۔خصوصاً انٹرویو والی ڈنڈی پر تحفظات ہیں ۔انٹرویو میں امیدوار سے متعلقہ مضامین کے متعلق ہی سوالات ہونے چاہئیے جبکہ اس کے ساتھ چلتی پھرتی یونیورسٹی کے ڈگری ہولڈرز کی اہلیت رکھتی جاتی ہے ۔

انہوں نے کہا کہ ان اقدامات و اصلاحات سے اگر تعلیمی اداروں میں بہتری آئی ہے اور معیار تعلیم بلند ہوتا ہے تو کوئی حرج نہیں۔قومی مفاد کی پالیسیوں کی حمایت کرینگے ۔اس کی آڑ میں کسی کے ساتھ زیادتی نہیں ہونی چاہئیے ۔

متعلقہ عنوان :