تحریک انصاف سینٹ انتخابات میں ووٹ فروخت کرنے والے ممبران صوبائی اسمبلی کے مستقبل کے بارے میں فیصلہ دو دن میں کرے گی

بدھ مئی 23:45

پشاور(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 09 مئی2018ء) پاکستان تحریک انصاف سینٹ انتخابات میں ووٹ فروخت کرنے والے ممبران صوبائی اسمبلی کے مستقبل کے بارے میں فیصلہ دو دن میں کرے گی ۔ جن ممبران اسمبلی نے شوکاز نوٹس کا جواب دیا ہے پارٹی صرف انہی کے ناموں پر غور کرے گی شوکاز نوٹس کا جواب نہ دینے والے ممبران کو فارغ تصور کیا جائیگا اور ان کے ناموں پر کوئی نظر ثانی نہیں ہوگی وزیراعلیٰ کے ترجمان اور پارٹی کے سینئر رکن شوکت علی یوسفزئی نے میڈیا کو بتایا کہ ان ممبران کے حوالے سے بنائی گئی کمیٹی کے سربراہ سپیکر اسد قیصر وزیراعلیٰ پرویز خٹک سے مشاورت کرکے ایک دو دن میں کمیٹی کا اجلاس بلائیں گے تاہم یہ واضح ہے کہ کمیٹی صرف ان ممبران کے ناموں پر نظر ثانی کرے گی جنہوں نے شوکاز نوٹس کا جواب دیا ہے اب تک ارکان خیبر پختونخوا اسمبلی میں عارف یوسف ‘ سمیع اللہ علی زئی ‘ معراج ہمایوں ‘ فیصل زمان ‘ سردار ادریس نے شوکاز نوٹس کا جواب دیا ہے ۔

(جاری ہے)

وزیراعلیٰ کے ترجمان نے بتایا کہ پارٹی چیئر مین عمران خان جن ممبران اسمبلی کے نام پریس کانفرنس میں لئے تھے انہیں اپنے صفائی پیش کرنے کیلئے کافی وقت بھی دیا مگر جو شوکاز نوٹس کا جواب دینے میں ناکام رہے انہیں پارٹی سے نکالنے کا فیصلہ ہوا ہے ۔ میڈیا پر پارٹی کو بدنام کرنے والوں کو کسی صورت میں برداشت نہیں کیا جائے گا پارٹی نے بڑا فیصلہ کیا ہے اب عوام ان کے حوالے سے خود فیصلہ کرے ۔

جن ممبران کو پارٹی سے نکالنے کا حتمی فیصلہ ہو گیا ہے ان میں نرگس بی بی ‘ دینہ ناز‘ نگینہ خان ‘ نسیم حیات‘ یاسین خلیل‘ قربان علی خان ‘ ضیاء اللہ آفریدی‘ امجد آفریدی شامل ہیں ۔ جبکہ باقی ممبران کے مستقبل کا فیصلہ کرنے کیلئے دو دن میں کمیٹی کا اجلاس بلایا جائیگا۔ زاہد درانی ‘عبید مایار ‘ وجیہہ الزمان خان ‘ جاوید نسیم‘ عبدالحق‘ خاتون بی بی کو بھی فارغ کر دیا گیا ہے ۔