سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے اطلاعات ،نشریات ،قومی تاریخ و ادبی ورثہ کا اجلاس،مقامی سنیمائوں میں بھارتی فلموں کی نمائش اور پاکستانی چینلز پر بھارتی کارٹون نشر ہونے پر تشویش کا اظہار

بدھ مئی 23:50

اسلام آباد ۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 09 مئی2018ء) سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے اطلاعات ،نشریات ،قومی تاریخ و ادبی ورثہ کا اجلاس گذشتہ روز چیئرمین کمیٹی فیصل جاوید خان کی زیر صدارت پارلیمنٹ ہائوس میں منعقد ہوا،جس میں کمیٹی کی ترجیحات اور کمیٹی کے آئندہ اجلاسوں میں زیر غور لانے جانے معاملات پر تبادلہ خیال کیا گیا،کمیٹی نے مقامی سنیمائوں میں بھارتی فلموں کی نمائش پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ اس سے پاکستان کی اپنی فلمی صنعت اور اس سے منسلک فنکار‘پروڈیوسر ‘تکنیکی ماہرین بے روز گار ہو گئے ہیں‘بھارتی فلموں کی نمائش سے پاکستان میں فلمیں بننا کم ہوئی ہیں جس سے پاکستانی ثقافت اور شناخت بھی متاثر ہورہی ہے‘مقامی فلموں کی بحالی حکومت کی اولین ترجیح ہونی چاہیے ۔

(جاری ہے)

کمیٹی نے پاکستانی چینلز پر بھارتی کارٹون نشر ہونے پر بھی تشویش کا اظہار کیا اورکہا کہ اس سے پاکستان کی نئی نسل کے زہنوں پر منفی اثرات مرتب ہورہے ہیں ‘پیمرا کو اس معاملے پر سنجیدہ اقدامات اٹھانے ہونگے ۔چیئرمین کمیٹی فیصل جاوید خان نے کہا کہ وزارت اطلاعات و نشریات کے امور سے متعلق آئندہ اجلاس میں تفصیلی بریفنگ لی جائے گی ۔سینیٹر مشتاق احمد نے کہا کہ کمیٹی کی گذشتہ تین سالہ کارکردگی کا جائزہ لیا جائے ۔

انہوں نے تجویز دی کہ ادبی ورثہ اور آثار قدیمہ کے حوالے سے بھی تفصیلی بریفنگ لی جائے ۔اجلاس میں ریاستی میڈیا بشمول اے پی پی ،پی ٹی وی ،ریڈیو پاکستان اور پی آئی ڈی میں تقرریوں کے کوٹہ اور کوڈ آف کنڈیکٹ کا بھی جائزہ لیا گیا ۔سینیٹر خوش بخت شجاعت نے سفارش کی کہ مارننگ شوز ، بچوں کے پروگرامات اور رمضان ٹرانسمیشن میں پیمرا کوڈ آف کنڈیکٹ کا بھی جائزہ لیا جائے۔