العزیزیہ اسٹیل ملز ریفرنس میں اجد ضیااحتساب عدالت میں پیش ،ْ بیان ریکارڈ کروایا

جے آئی ٹی کو سپریم کورٹ کی طرف سے 60دنوں میں حتمی رپورٹ جمع کرانے کی ہدایات دی گئیں ،ْواجد ضیاء

جمعرات مئی 14:13

العزیزیہ اسٹیل ملز ریفرنس میں اجد ضیااحتساب عدالت میں پیش ،ْ بیان ریکارڈ ..
اسلام آباد(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 10 مئی2018ء) سابق وزیراعظم نواز شریف کے خلاف العزیزیہ اسٹیل ملز ریفرنس میں جے آئی ٹی سربراہ واجد ضیا احتساب عدالت میں پیش ہوئے اور بیان ریکارڈ کروایا ۔جمعرات کو احتساب عدالت کے جج محمد بشیر نے العزیزیہ اسٹیل ملز ریفرنس کی سماعت کی۔ اس موقع پر جے آئی ٹی سربراہ واجد ضیا عدالت میں پیش ہوئے اور اپنا بیان ریکارڈ کرایا۔

واجد ضیاء نے عدالت کو بتایا کہ 20اپریل کو ایڈیشنل ڈائریکٹر ایف آئی اے کے طور پر کام کر رہا تھا کہ سپریم کورٹ نے جے آئی ٹی تشکیل دینے کا فیصلہ سنایا، عدالت نے گلف اسٹیل ملز کے قیام سے متعلق سوالات پوچھے، سپریم کورٹ نے پوچھا کہ سرمایہ قطر سے کیسے برطانیہ اور سعودی عرب گیا اور قطری شہزادے حمد بن جاسم کا خط افسانہ ہے یا حقیقت، اس کے علاوہ حسین نواز کی جانب سے نوازشریف کو کروڑوں روپے کے تحائف اور لندن فلیٹس سے متعلق بھی سوال کیے گئے۔

(جاری ہے)

واجد ضیا نے کہا کہ جے آئی ٹی نے تفتیش کرناتھی کہ نواز شریف ان اثاثوں کے مالک ہیں یا کوئی بے نامی دار ہیں، جے آئی ٹی کو سپریم کورٹ کی طرف سے 60دنوں میں حتمی رپورٹ جمع کرانے کی ہدایات دی گئیں، سپریم کورٹ نے مجھے جے آئی ٹی کا سربراہ اور دیگر پانچ افراد کو بطور ممبر شامل کیا، دس جولائی 2017 کو دس والیمز پر مشتمل جے آئی ٹی رپورٹ سپریم کورٹ میں جمع کروائی۔