لاہور ہائیکورٹ نے کالے ہرن کے شکار پر پابندی عائد کر دی ، وائلڈ لائف ایکٹ کے تحت کی گئی کارروائیوں کا ریکارڈ طلب

جمعرات مئی 19:32

لاہور(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 10 مئی2018ء) لاہور ہائیکورٹ نے کالے ہرن کے شکار پر پابندی عائد کرتے ہوئے وائلڈ لائف ایکٹ کے تحت کی گئی کارروائیوں کا ریکارڈ طلب کرلیا۔۔چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ نے سینئر قانون دان شیراز ذکا کی درخواست پرسماعت کی۔

(جاری ہے)

درخواست میں موقف اختیار کیا گیا کہ وائلڈ لائف ایکٹ کے تحت کالے ہرن کا شکار غیرقانونی ہے لیکن اس کے باوجود پنجاب میں کالے ہرن کا شکار ہورہا ہے درخواست کی جانب سے استدعا کی گئی کہ کالے ہرن کے شکار پر پابندی عائد کی جائے جسے چیف جسٹس لاہورہائیکورٹ نے منظور کرتے ہوئے کالے ہرن کے شکار پر پابندی عائد کردی عدالت نے گزشتہ پانچ سالوں میں کتنے لوگوں کو وائلڈ لائف ایکٹ کے تحت شکار کرنے پر سزا ہوئی ہے، اس کا تمام ریکارڈ طلب کرلیا۔