مشرق وسطیٰ میں جنگ کے بادل؛

ایران کا گولان کی پہاڑیوں پر موجود اسرائیلی بیس پر حملہ،کئی گھنٹوں تک فائرنگ کا تبادلہ جاری رہا تہران کی جانب سے کئے گئے راکٹ فائر سے بیس کو جزوی نقصان پہنچا،ترجمان اسرائیلی فوج

جمعرات مئی 21:09

تہران(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 10 مئی2018ء) ٹرمپ کے اعلان سے مشرقِ وسطیٰ میں جنگ کے بادل منڈ لانے لگے۔شام پر اسرائیلی حملے کے بعد ایران نے اسرائیلی پوزیشن پر حملہ کرتے ہوئے گولان کی پہاڑیوں پر کئی راکٹ برسا دیے۔عالمی میڈیا کے مطابق ایرانی حملوں میں اسرائیلی تنصیبات کو نشانہ بنایا گیا۔

(جاری ہے)

اس حوالے سے ترجمان اسرائیلی فوج کا کہنا تھا کہ ایران کی القدس کور نے بعث پر بیس سے زائد راکٹ فائر کیے،جس سے تنصیبات کو معمولی نقصان پہنچا۔

دونوں جانب سے کئی گھنٹے تک فائرنگ کی جاتی رہی،اسرائیلی فضائیہ نے لبنان کی فضائی حدود سے گزرتے ہوئے شام میں القنطیرہ اور جنوبی دمشق میں ایرانی پوزیشن کو نشانہ بنایا۔واضح رہے کہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے کہا تھا کہ ایران سے معاہدہ بنیادی طور پر ناقص تھا۔اس لیے میں اعلان کرتا ہوں کہ امریکا ایران کیساتھ جوہری معاہدے سے علیحدہ ہو رہا ہے۔