لاہور چڑیا گھر میں ہتھنی سوزی کو بچھڑے ایک برس بیت گیا

انتظامیہ سوزی کے پنچرے کو آباد نہ کرپائی، حکام نے ہتھنی کی ہلاکت کے ایک ماہ بعد ہی متبادل لانے کا وعدہ کیا تھا

جمعرات مئی 22:21

لاہور (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 10 مئی2018ء) لاہور چڑیا گھر کے ماتھے کا جھومر ہتھنی سوزی کو بچھڑے ایک برس بیت گیا لیکن انتظامیہ سوزی کے پنچرے کو آباد نہ کرپائی، حکام نے ہتھنی کی ہلاکت کے ایک ماہ بعد ہی متبادل لانے کا وعدہ کیا تھا۔تفصیلات کے مطابق ہاتھی گھر کی عمارت کو ویران ہوئے ایک برس بیت چکا ہے مگر ابھی تک یہاں نئے مکین کا بندوبست نہیں ہوسکا۔

گیارہ مئی 2017ء کو سوزی کی سانسیں بند ہوئیں تو ہاتھی گھر بھی بند ہوگیا۔

(جاری ہے)

2017ء میں بھی یہاں آنے والے بچے بڑے مایوس تھے اور اب 2018ء میں ایک سال بعد بھی مایوسی کا وہی عالم ہے۔ڈی جی وائلڈلائف خالد عیاض خان نے سوزی کی ہلاکت کے بعد ایک ماہ میں نیا ہاتھی لانے کا وعدہ کیا تھا مگر یہ وعدہ تو شاید ہوا کا ایک جھونکا تھا یا پانی کا بلبلا۔ اب تک ہاتھی آیا، ہاتھی گھر ویران ہے ۔چڑیا گھر انتظامیہ کے لئے سوزی کی موت بلاشبہ ایک سانحہ تھی لیکن ایک سال گزرنے کے باوجود متبادل ہاتھی کا انتظام نہ کر پانا انتظامیہ کی کارکردگی پر سوالیہ نشان ہے۔

متعلقہ عنوان :