سرکاری موجیں ختم ہو گئیں، الیکشن قریب آنے پر اہم شخصیات نے سکیورٹی کمپنیوں سے معاہدے کر لیے

متعدد سیاستدانوں نے بُلٹ پروف گاڑیاں بھی حاصل کر لیں

Sumaira Faqir Hussain سمیرا فقیرحسین جمعہ مئی 13:24

سرکاری موجیں ختم ہو گئیں، الیکشن قریب آنے پر اہم شخصیات نے سکیورٹی ..
اسلام آباد (اُردو پوائنٹ تازہ ترین اخبار۔ 11 مئی 2018ء) : حکومتی مدت ختم ہونے کے قریب آتے ہی سیاستدانوں سمیت اہم شخصیات کی سرکاری موجیں بھی ختم ہونے کو ہیں جس کے پیش نظر متعدد سیاستدانوں نے نجی کمپنیوں سے سکیورٹی معاہدے کرنے کے ساتھ ساتھ بُلٹ پروف گاڑیاں بھی حاصل کر لی ہیں، متعدد سیاستدان اور ملک کی اہم شخصیات اپنی سکیورٹی کو مزید سخت کرنے کے لیے نجی سکیورٹی کمپنیوں کے ساتھ رابطے میں ہیں، کئی سیاستدانوں نے الیکشن مہم کے لیے بُلٹ پروف گاڑیاں حاصل کر لی ہیں۔

میڈیا ذارئع کے مطابق زیادہ تر سیاستدانوں نے اپنی سکیورٹی کے لیے ریٹائرڈ فوجیوں کو ترجیح دی ہے۔ بعض سیاستدانوں نے تو ان کمپنیوں کے ساتھ الیکشن مہم اور اپنی تمام مصروفیاف جلسے ، جلوسوں ، کارنر میٹنگز ، دفاتر اور رہائشگاہوں پر بھی سکیورٹی رکھ لی ہے۔

(جاری ہے)

یا درہے کہ سپریم کورٹ کے جج جسٹس اعجاز الاحسن کے گھر پر فائرنگ کے بعد پنجاب حکومت نے ججز کی سکیورٹی بڑھانے کی درخواست کی تھی جسے چیف جسٹس نے مسترد کردیا تھا۔

بعد ازاں چیف جسٹس نے غیر متعلقہ افراد کو سرکاری سکیورٹی فراہم کرنے پر از خود نوٹس لیا تھا اور تمام غیر متعلقہ افراد سے سکیورٹی واپس لینے کی ہدایت کی تھی۔ سپریم کورٹ کے حکم پر عملدرآمد کرتے ہوئے آئی جی پنجاب پولیس عارف نواز نے پنجاب بھر میں سیکیورٹی پر مامور 4 ہزار 610 اہلکاروں کو واپس بلا لیا تھا۔ ذرائع کے مطابق پنجاب میں 1853 شخصیات سے سیکیورٹی واپس لی گئی ، 297 سیاستدانوں کی سیکیورٹی سے1347 اہلکار واپس بلا لیے گئے ۔

آئی جی پنجاب کےحکم پر 527 پولیس افسران کی سیکیورٹی سے 1074 اہلکار واپس بلائے گئے ، لوئر کورٹس کے 469 افسران کی ڈیوٹی سے 626 اہلکار جب کہ 23 وکلا کی سیکیورٹی پر تعینات 39 اہلکار واپس بلائے گئے ۔250مذہبی رہنماؤں کی سیکیورٹی پر تعینات 296 اہلکار اور 233 شہریوں کی سیکیورٹی انجام دینے والے 1075 اہلکاروں کو بھی واپس بلا لیا گیا۔قبل ازیں سپریم کورٹ پشاور رجسٹری میں چیف جسٹس نے غیر متعلقہ افراد کو دی جانے والی سکیورٹی پرآئی جی کےپی کے استفسار کیا تھا ۔

چیف جسٹس نے آئی جی خیبرپختونخوا ہ کو غیر متعلقہ افراد سےسیکیورٹی واپس لینے کا حکم دیا،آئی جی صلاح الدین نے عدالت کو رات تک غیر متعلقہ افراد سے سیکیورٹی واپس لینے کی یقین دہانی کروائی تھی۔20 اپریل کو آئی جی خیبر پختونخوا نے بتایا کہ 1769 غیر متعلقہ افراد سے سکیورٹی واپس لے لی۔ جس پر چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ آپ نے بہت اچھا کام کیا، کوئی عدالت اگر کسی کو سیلوٹ کر سکتی تو میں آئی جی خیبرپختونخوا کو سیلوٹ کرتا۔