قصور میں عدلیہ مخالف ریلی نکالنے پر مسلم لیگ (ن)کے ایم این اے سمیت 6افراد پر فرد جرم عائد کردی

Mian Nadeem میاں محمد ندیم جمعہ مئی 16:32

قصور میں عدلیہ مخالف ریلی نکالنے پر مسلم لیگ (ن)کے ایم این اے سمیت 6افراد ..
لاہور(اردوپوائنٹ اخبارتازہ ترین-انٹرنیشنل پریس ایجنسی۔11 مئی۔2018ء) لاہورہائیکورٹ نے قصور میں عدلیہ مخالف ریلی نکالنے پر مسلم لیگ (ن)کے ایم این اے سمیت 6افراد پر فرد جرم عائد کردی ہے۔۔لاہور ہائیکورٹ کے جسٹس مظاہر علی اکبر نقوی کی سربراہی میں 3 رکنی فل بینچ نے قصور میں عدلیہ مخالف احتجاج اور ریلی والے ارکان اسمبلی سمیت دیگر کیخلاف توہین عدالت کی درخواست پر سماعت کی۔

پراسیکیوٹر نے لیگی ایم این اے شیخ وسیم اورایم پی اے نعیم صفدر سمیت 6ملزمان کو فرد جرم پڑھ کر سنائی جس پرملزمان نے صحت جرم سے انکار کیا۔فل بینچ نے مسلم لیگ (ن) کے رکن قومی اسمبلی شیخ وسیم اور رکن پنجاب اسمبلی نعیم صفدر سمیت 6 افراد پرفرد جرم عائد کرتے ہوئے ملزمان کو 7 روز میں جواب داخل کرنے کا حکم دیا تاہم ارکان اسمبلی سمیت 6 ملزمان نے صحت جرم سے انکار کیا۔

(جاری ہے)

ملزمان عدالت میں فرد جرم سے بچنے کیلئے اپنی بیماریوں، عدلیہ تحریک کا حوالہ دیتے رہے اور معافیاں بھی مانگتے رہے جس پربینچ نے ریمارکس دیئے کہ آپ کا لیڈر بھی سارا دن یہی کام کرتا ہے، یہ کورٹ آف لاءہے یہاں کسی کے خلاف فیصلہ نہیں ہوگا اور قانون کی حکمرانی ہوگی۔۔عدالت عالیہ نے ارکان اسمبلی کے خلاف توہین عدالت کی مزید کارروائی 18 مئی تک ملتوی کردی جبکہ ملزمان کو فرد جرم کی کاپیاں بھی فراہم کردی گئی ہیں۔

یاد رہے کہ لاہور ہائیکورٹ نے قصور ریلی میں عدلیہ مخالف نعرے بازی کے مقدمہ میں نامزد ایم این اے، ایم پی اے سمیت تمام ملزمان کے نام ای سی ایل میں شامل کرنے کا حکم دیا تھا۔ لاہور ہائیکورٹ کے جسٹس سید مظاہر علی اکبر نقوی کی سربراہی میں تین رکنی فل بنچ نے کیس کی سماعت کی۔عدالتی حکم پر نامزد ملزمان ایم این اے وسیم اختر، ایم پی اے نعیم صفدر، چیئرمین بلدیہ قصور ایاز خان، وائس چیئرمین احمد لطیف کو عدالت میں پیش کیا گیا۔

ڈی پی او قصور نے عدالت کو بتایا کہ دو ملزمان جمیل خان اور ناصر احمد خان مفرور ہیں عدالت نے استفسار کیا کہ مفرور ملزمان کو کیوں گرفتار نہیں کیا گیا، ڈی پی او قصور نے بتایا کہ مقدمے میں متعدد ملزمان کو گرفتار کیا جا چکا ہے۔۔عدالت نے عدلیہ مخالف تقاریر کے مقدمہ میں نامزد ایم این اے ، ایم پی اے سمیت تمام ملزمان کے نام ای سی ایل میں شامل کرنے کا حکم دے دیاعدالت نے ڈی پی او قصور کو ہدایت کی ہے کہ اگر معاملہ سائبر کرائم کے زمرے میں آتا ہے تو ایف آئی اے کے سپرد کر دیا جائے۔

عدالت نے مفرور ہونے والے دونوں ملزمان جمیل خان اور ناصر احمد خان کو آئندہ سماعت پر پیش کرنے کا حکم دیتے ہوئے کیس کی مزید سماعت 7 مئی تک ملتوی کر دی تھی۔ لاہور ہائیکورٹ نے قصور ریلی میں عدلیہ مخالف نعرے بازی کے مقدمہ میں نامزد ایم این اے، ایم پی اے سمیت تمام ملزمان کے نام ای سی ایل میں شامل کرنے کا حکم دیا تھا۔