عباس انسٹیٹیوٹ آف میڈیکل سائنسز میں،ڈسپنسر کی اسامیوں پر بھرتیوں میں گڈگورنس کا جنازہ نکا ل دیا گیا

سفارشیوں نے ایڈھاک ملازمین کی جگہ لے لی ‘جعلی اسناد ر بھرتی ہونے والی خواتین نے دوبارہ انٹرویو دے کر سکیل 9کے آسامیوں پر تعینات کر دی گئی

جمعہ مئی 18:18

مظفرآباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 11 مئی2018ء) چراغ تلے اندھیراہ کے مصداق پر وزیر اعظم سیکرٹریٹ سے چند فرلانگ کے فیصلے پر سب سے بڑے سرکاری ہسپتال میںفرضی، بوگس کاروائیوں جعلی تقریوں پر بڑے پیمانے پر انکشاف، عباس انسٹیوٹ آف میڈیکل سائنسز ( ایمز) میں،ڈسپنسر کی اسامیوں پر بھرتیوں میں گڈگورنس کا جنازہ نکا ل دیا گیا ۔

(جاری ہے)

سفارشیوں نے ایڈھاک ملازمین کی جگہ لے لی جعلی اسناد ر بھرتی ہونے والی خواتین نے دوبارہ انٹرویو دے کر سکیل 9کے آسامیوں پر تعینات کر دی گئی ،عدالتی حکم پر سات آسامیوں پر انٹرویوں لے کر دیگر 13پر بھی تقرریاں کردی گئی تفصیلات کے ایمز مظفرآباد میں 2009میں ڈسپنسر کی 20آسامیوں پر ایڈھاک تقرریاں کی گئی قبل ازیں ان 20آسامیوں پر تعینات ایڈھاک ملازمین نے 2005سے 2009تک خدمات سرانجام دیں جس کے ہائی کورٹ کے فیصلہ کی روشنی میں مذکورہ آسامیوں کو دوبارہ مشتہر کیا گیا جس پر عدالت الظمیٰ کا فیصلہ کی روشنی میں ان 20آسامیوں پر تحت قوائد ٹسٹ انٹرویوں لینے کے احکامات صادر کیے گئے تااہم ایمز انتظامیہ نے ایڈھاک ملازمین کے بجائے آسامیوں کو دوبارہ مشتہر کر کے قبل ازیں جعلی اسناد پر بھرتی ہونے پر فارغ کی گئی خواتین سمیت سات امیدواروں سے انٹرویو لیا اور 13دیگر آسامیوں پر بدو انٹرویوں مستقل کرنے کے لیے فائل متعلقہ احکام کو دے دی گئی اس طرح ایڈھاک ملازمین کی حق تلفی کی گئی اور ان کو مستقل کرنے کے بجائے سفارشی افراد کو بھرتی کر نے کی کوشش کی جارہی ہے متاثرہ ایڈھاک ملازمین نے وزیراعظم آزاد کشمیر،،چیف جسٹس آف آزاد کشمیر ،چیف سیکرٹر ی آزاد کشمیر سے نوٹس لینے کا مطالبہ کیا ہے ۔

متعلقہ عنوان :