لاہور ہائیکورٹ نے سوشل میڈیا پر عدلیہ مخالف مواد کو روکنے کیلئے تجاویز مانگ لیں

جمعہ مئی 19:58

لاہور (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 11 مئی2018ء) لاہور ہائیکورٹ کے جسٹس سید مظاہر علی اکبر نقوی کی سربراہی تین رکنی بنچ نے سوشل میڈیا پر عدلیہ مخالف مواد کو روکنے کیلئے تجاویز مانگ لی ہیں اور ہدایت کی کہ عدلیہ مخالف مواد کی اپ لوڈنگ کو روکنے کے بارے میں تجاویز پیش کی جائیں۔ جس میں سوشل میڈیا پر عدلیہ مخالف مواد کو نہ ہٹانے کا اقدام چیلنج کیا گیا۔

سماعت کے دوران درخواست گزار کے وکیل اظہر صدیق نے نشاندہی کی کہ سوشل میڈیا پر عدلیہ مخالف مواد آپ لوڈ کیا جا ریا ہے جو توہین عدالت کے زمرے میں آتا ہے۔

(جاری ہے)

درخواست گزار وکیل نے عدلیہ مخالف مواد کو سوشل میڈیا پر نہ صرف روکا جائے بلکہ ایسے مواد کو ہٹانے کی بھی ضرورت ہی. وکیل نے نکتہ اٹھایا کہ عدلیہ مخالف مواد توہین عدالت کے قانون کے قابل دست اندازی جرم ہے۔

درخواست گزار کے وکیل نے یہ بھی بتایا کہ عدلیہ مخالف مواد کیخلاف متعلقہ حکام سے بھی رجوع کیا لیکن کوئی شنوائی نہیں ہوئی۔ درخواست گزار کے وکیل نے استدعا کی کہ سوشل میڈیا پر عدلیہ مخالف مواد کو روکنے کیلئے احکامات دیئے جائیں۔۔پاکستان ٹیلی کمیونیکیشن اتھارٹی نے عدالتی حکم پر تفصیلی رپورٹ پیش کر دی۔ درخواست پر مزید کارروائی 18 مئی کو ہوگی۔