نوشکی کوئٹہ روٹ پر گاڑی مالکان من چاہا کرایہ وصول کرنے لگے ، عوام کو سخت مشکلات کا سامنا

ہفتہ مئی 22:06

نوشکی (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 12 مئی2018ء) نوشکی کوئٹہ روٹ پر گاڑی مالکان کی من مانیاں جاری ، کرایوں میں خودساختہ کرکے عوام کو مزید مشکل میں ڈال دیاہے، گاڑیوں میں ٹھنڈے پانی کی سہولت میسر نہ ہونے سے عوام رل گئے، عوام حلقوں نے کمشنر کوئٹہ ڈویژن و ڈپٹی کمشنر نوشکی سے نوٹس لینے کی اپیل ہے ۔

(جاری ہے)

تفصیلات کے مطابق اسسٹنٹ کمشنر نوشکی کے ڈھنڈا سیٹ کے خاتمے اور سرکاری کرایہ کے احکامات کو ڈرائیوروں نے پس پشت ڈال کر ڈھنڈا سیٹ پر تین بندوں کی بجائے چار بندے بٹھایا جا رہے جس سے عوام کو شدید مشکلات کا سامنا ہے اسٹوڈنٹس کیلئے حکومت کی جانب سے نصف کرایہہ مقرر کیاگیا ہے جبکہ روٹ پر چلنے والے ڈرائیوروں کی جانب سے طلباء کی تذلیل کی جاتی ہے ان کو کوئی رعایت نہیں دی جاتی کوئٹہ نوشکی روٹ پر گاڑی مالکان نے خود سے کرایہ200 کی بجائے 250روپے مقرر کی ہے کوئی پوچھنے والا نہیں ہے شدید گرمی میں گاڑیوں میں ٹھنڈا پانی تک میسر نہیں جس کے باعث بچے بوڑھے اور خواتین کیلئے سفر کرنا کسی عذاب سے کم نہیں عوامی حلقوں کا کہنا ہے کہ ڈرائیور زخود گاڑیوں میں سگریٹ پیتے ہیں جس سے گاڑی میں سوار مریضوں سمیت دیگر مسافروں کو مشکلات پیش آتی ہے جبکہ چند پیسوں کے لالچ میں گاڑی چھت پر سواری بٹھا کر انسانی جانوں کو خطرے میں ڈال دی جاتی ہے ان کا کہنا تھا کہ ڈرائیوروں کا غیر اخلاقی رویہ سے روٹ پر سفر کرنے والے باعزت شہری تنگ آچکے ہے اعلیٰ حکام بلخصوص کمشنر کوئٹہ ڈویژن جاوید انور شاہوانی ،ڈپٹی کمشنر نوشکی ظفر علی محمد شہی سے اپیل کی کہ ایسے ڈرائیور اور گاڑی مالکان کے خلاف سخت کاروائی کریں جن سے عوامی مشکلات میں اضافہ اور انسانی جانوں کا خطرہ لاحق ہو۔