امریکی سفارتخانے کی القدس منتقلی آج،ابتدا میں عملہ50 اہلکاروں پر مشتمل ہو گا

افتتاحی تقریب میں 800مہمان مدعو،دورے کے دوران امریکی وفد کسی فلسطینی اہل کار سے ملاقات نہیں کرے گا،حکام

اتوار مئی 12:40

واشنگٹن (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 13 مئی2018ء) یروشلم میں کھلنے والے نئے امریکی سفارت خانے میں ابتدائی طور پر کم از کم 50 اہل کاروں کا عملہ تعینات ہوگا۔غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق یہ بات ٹرمپ انتظامیہ کے اعلیٰ اہلکاروں نے بتائی جنھوں نے انتظام کا جائزہ لیا۔قوی امکان یہ ہے کہ سفارت خانے کا افتتاح آج بروز پیر کو ہوگا۔ سفارت خانہ صدر ڈونالڈ ٹرمپ کے احکامات پر تل ابیب سے منتقل ہوگا، جنھوں نے یروشلم کو اسرائیل کا دارالحکومت تسلیم کیا ہے۔

(جاری ہے)

میڈیارپورٹس کے مطابق افتتاحی تقریب میں اندازاً 800 مہمان شریک ہوں گے۔ حکام کا کہنا تھا کہ اپنے دورے کے دوران، امریکی وفد کسی فلسطینی اہل کار سے ملاقات نہیں کرے گا۔سفارت خانے کے ابتدائی عملے میں سفیر ڈیوڈ فرائڈمین کے مشیر اور قونصل خانے کے اہل کار شامل ہیں جو پہلے ہی اسی مقام پر کام کر رہے ہیں۔سفارت خانے کا آغاز امریکہ کی موجودہ ویزا اور پاسپورٹ کے اجرا کی تنصیب کے عملے سے ہوگا، جو اسرائیل میں موجود امریکی اہل کاروں میں سے مختصر ارکان پر مشتمل ہے۔اہلکاروں کی شناخت ظاہر کرنے کی اجازت نہیں تھی، جنھوں نے اخباری نمائندوں کو نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بریف کیا۔