نائن الیون کے بعد افغانستان جنگ میں گیا جس کے گہرے اثرات پاکستان پر پڑے ،ْ ناصر خان جنجوعہ

افغانستان کیخلاف ہماری سرزمین استعمال نہ ہو اس غرض سے فاٹا میں فوج بھیجی مگر افغان طالبان کے ہمدرد گروپ تحریک طالبان پاکستان نے جہاد کا نعرہ لگایا ،ْایک ٹائم تھا جب بلوچستان میں پاکستانی جھنڈے جلائے جاتے تھے ،ْبلوچستان میں بدامنی کی بڑی وجہ نفی سوچ کے قوم پرست تھے ،ْسول ملٹری پالیسی اپنائی ،ْ22ہزار پاکستانی افواج کے جوانوں شہید ہوئے ،ْکیا پاکستان کا دنیا اور خطہ میں امن کیلئے کردار کم ہی پاکستان پر اب بھی طالبان اور حقانی گروپ کی حمایت کا الزام لگایاجاتاہے ،ْامریکہ افغانستان میں ناکامی کا ملبہ پاکستان پر گرارہا ہے ،ْافغانستان ،ْ شام ،ْ عراق کشمیر ،ْروہنگیا اور دیگر ممالک کا سیاسی پرامن حل چاہتے ہیں ،ْپاکستان دنیا کی تمام مارکیٹ کو جوڑے گا ،ْہم دنیاکا سب سے بڑاٹریڈ ،ْصنعتی حب بنیں گے ،ْسیمینار سے خطاب

اتوار مئی 15:40

اسلام آباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 13 مئی2018ء) قومی سلامتی کے مشیر لیفٹیننٹ جنرل ریٹائرڈ ناصر خان جنجوعہ نے کہا ہے کہ نائن الیون کے بعد افغانستان جنگ میں گیا جس کے گہرے اثرات پاکستان پر پڑے ،ْافغانستان کیخلاف ہماری سرزمین استعمال نہ ہو اس غرض سے فاٹا میں فوج بھیجی مگر افغان طالبان کے ہمدرد گروپ تحریک طالبان پاکستان نے جہاد کا نعرہ لگایا ،ْایک ٹائم تھا جب بلوچستان میں پاکستانی جھنڈے جلائے جاتے تھے ،ْبلوچستان میں بدامنی کی بڑی وجہ نفی سوچ کے قوم پرست تھے ،ْسول ملٹری پالیسی اپنائی ،ْ22ہزار پاکستانی افواج کے جوانوں شہید ہوئے ،ْکیا پاکستان کا دنیا اور خطہ میں امن کیلئے کردار کم ہی پاکستان پر اب بھی طالبان اور حقانی گروپ کی حمایت کا الزام لگایاجاتاہے ،ْامریکہ افغانستان میں ناکامی کا ملبہ پاکستان پر گرارہا ہے ،ْافغانستان ،ْ شام ،،ْ عراق کشمیر ،ْروہنگیا اور دیگر ممالک کا سیاسی پرامن حل چاہتے ہیں ،ْپاکستان دنیا کی تمام مارکیٹ کو جوڑے گا ،ْہم دنیاکا سب سے بڑاٹریڈ ،ْصنعتی حب بنیں گے۔

(جاری ہے)

اتوار کو ایسوسی ایٹڈ پریس آف پاکستان کے زیر اہتمام بین الاقوامی کانفرنس آف نیوز ایجنسیز سے خطاب کے دور ان پاکستان کا عالمی اور ریجنل امن وامان کے کردار پر کانفرنس میں بریفنگ دیتے ہوئے ناصر خان جنجوعہ نے کہا کہ یہ خوشی کی بات ہے کہ بین الاقوامی میڈیا بھی ہماری کہانی سنے آیا ۔انہوںنے کہاکہ پاکستان کو غریب اور انتہا پسند ملک کے طور پردیکھا جاتاہے انہوںنے کہاکہ پاکستان کو ایٹمی ملک اور امن وامان کی خراب صورتحال کے طور پر دیکھایاجاتاہے ،ْدنیا میں ہمیں افغانستان میں دوہری پالیسی کے طور پر دیکھایاجاتاہے ،ْآج مہمانوں اصل پاکستان دکھانا چاہتا ہوں۔

انہوںنے کہاکہ پاکستان کے نارتھ بے انتہا قدرتی حسن ہے ،ْپاکستان میں نفی 50 ڈگری ،ْ چولستان میں 50 ڈگری درجہ حرارت بھی ہوتا ہے۔انہوںنے کہاکہ ہماری بیٹیاں پائلٹ بنیں ،ْکرکٹ اور ہاکی کھیلتی ہیں۔ناصر خان جنجوعہ نے کہا کہ ہم نے افغانستان سے سویت یونین کے انخلاء نائن الیون کے بعد سب سے مشکل خالات دیکھے ،ْکیا سویت یونین کو افغانستان پاکستان لے کرآیا نہیں ،ْپاکستان افغان کھڑا رہا ،ْپاکستان نے خطہ میں امن کیلئے اہم کردار ادا کیا ،ْسویت یونین کے انخلاء کے بعد افغانستان میں ایک خلاء پیدا ہوئی جس میں القاعدہ ابھری۔

کیاسویت یونین کے انخلاء کے بعد بدامنی کا ذمہ دار پاکستان ہے نہیں ،ْنائن الیون کے بعد افغانستان جنگ میں گیا جس کے گہرے اثرات پاکستان پر پڑے۔انہوںنے کہاکہ اس وقت افغانستان میں طالبان نے وہاں کی عوام کو نیٹو اور امریکا کے انخلاء کیلئے کھڑا کیا ،ْافغانستان کے خلاف ہماری سرزمین استعمال نہ ہو اس غرض سے فاٹا میں فوج بھیجی ،ْمگر افغان طالبان کے ہمدرد گروپ تحریک طالبان پاکستان نے جہاد کا نعرہ لگایا ،ْاس وقت افغان باڈر پر 2لاکھ سیکورٹی فورسسز کے اہلکار تعینات کئے۔

انہوںنے کہاکہ افغان پاکستان باڈر 2400کلومیٹر پر مشتمل ہے ،ْگزشتہ40سال سے 33لاکھ مہاجرین کی دیکھ بھال کررہے ہیں ،ْاس وقت کے پی سے 228جبکہ بلوچستان سے 234 روٹس افغانستان جاتے ہیں ،ْکیا پاکستان کا دنیا اور خطہ میں امن کے لئے کردار کم ہی انہوںنے کہاکہ فاٹا کی سات ایجنسیاں ہیں ،ْجو طالبان کے قبضے میں تھی ،ْ میں وہ خوش قسمت ہوں جو سوات آپریشن میں شامل رہا۔

انہوںنے کہاکہ بلو چستان پاکستان کے کل رقبے کا 45فیصدہے ،ْایک ٹائم تھا جب بلوچستان میں پاکستانی جھنڈے جلائے جاتے تھے ،ْبلوچستان میں بدامنی کی بڑی وجہ نفی سوچ کے قوم پرست تھے ،ْسول ملٹری پالیسی آپنائی ،ْ جیوے جیوے بلوچستان ،ْجیوئے جیوئے پاکستان ۔انہوںنے کہاکہ 22ہزار پاکستانی افواج کے جوانوں شہید ہوئے۔انہوںنے کہاکہ دہشت گردی کے خاتمہ کے بعد اب تعمیر ترقی کا کام بھی جاری ہے ،ْآپریشن ردالفساد کامیابی سے جاری ہے ،ْ پاکستان پر اب بھی طالبان اور حقانی گروپ کی حمایت کا الزام لگایاجاتاہے ،ْجبکہ طالبان الزام لگاتے ہیں کہ پاکستان امریکہ کو سپورٹ کررہا ہے ،ْامریکہ افغانستان میں ناکامی کا ملبہ پاکستان پر گرارہا ہے ،ْہم افغانستان ،ْ شام ،،ْ عراق کشمیر ،ْروہنگیا اور دیگر ممالک کا سیاسی پرامن حل چاہتے ہیںانہوںنے کہاکہ ہم وہ واحد ملک ہے جس کے علماء نے دہشت گردی کے خلاف فتوی جاری کیا انہوںنے کہاکہ پاکستان دنیا کاواحد ملک ہے جو دنیا کی85.9فیصد عوام کو آپس میں ملاسکتا ہے ،ْپاکستان دنیا کو ون بیلٹ ون روڈ سے جوڑ سکتا ہے ،ْدنیا کے مسلم ممالک میں تمام تر قدرتی وسائل موجودہیں ،ْپاکستان دنیا کی تمام مارکیٹ کو جوڑے گا ،ْہم دنیاکا سب سے بڑاٹریڈ ،ْصنعتی حب بنیں گے ،ْپاکستان بڑی معیشت بنے گا ،ْپاکستان کے پاس خومختار ایٹمی ملک ہے ،ْپاکستان دنیا کو اپس میں جوڑے گاپاکستان کی ترقی کا سورج طلوع ہورہاہے۔