سپریم کورٹ کا نجی میڈیکل کالجوں کو فاٹا اور بلوچستان کے 194 مزید طلبا کو داخلہ دینے کا حکم

عدالتی فیصلہ پر دو ہفتوں میں عملدرآمد کرکے عدالت کورپورٹ پیش کی جائے ،ْ داخلہ حاصل کرنے والے طلبا کی فیس ایچ ای سی ادا کرے گا ،ْعدالت عظمیٰ

اتوار مئی 21:20

اسلام آباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 13 مئی2018ء) سپریم کورٹ نے نجی میڈیکل کالجوں میں سہولیات کی عدم دستیابی کے حوالے سے کیس میں نجی میڈیکل کالجوں کو فاٹا اور بلوچستان کے 194 مزید طلبا کو داخلہ دینے کا حکم دیتے ہوئے کہاہے کہ عدالتی فیصلہ پر دو ہفتوں میں عملدرآمد کرکے عدالت کورپورٹ پیش کی جائے ،ْ داخلہ حاصل کرنے والے طلبا کی فیس ایچ ای سی ادا کرے گا۔

اتوار کو چیف جسٹس کی سربراہی میں دورکنی بنچ نے کیس کی سماعت کی۔

(جاری ہے)

ا س موقع پر پی ایم ڈی سی اور ہائیر ایجوکیشن کمیشن کی جانب سے فاٹا اور بلوچستان کے طلبا ء کے میڈیکل کالجوں میں داخلوں سے متعلق رپورٹ عدالت میں پیش کردی گئی۔ رپورٹ پرمخالف وکیل کے اعتراض پر وکیل صفائی نے کہا کہ ہم نے موجودہ طلبا ء کا ڈیٹا تیارکرکے اپنی ذمہ داری پوری کرلی ہے۔

عدالت نے نجی میڈیکل کالجز کو ہدایت کی کہ فاٹا اور بلوچستان کے 194 مزید طلبا کو داخلہ د اخلے دئیے جائیں ان طلبا کی فیس ایچ ای سی ادا کرے گا اورفیصلہ پر دو ہفتوں میں عملدرآمد کیا جائے۔ سماعت کے دوران بابر اعوان نے کہا کہ عدالت پہلی بار پسماندہ علاقوں کے بچوں کے لئے کچھ کررہی ہے۔ چیف جسٹس نے کہا کہ ہم کچھ نہیں کرسکتے یہ سب اللہ تعالیٰ کی مہربانی ہے۔ بعدازاں مزید سماعت ملتوی کردی گئی۔