دربند پولیس نے ڈکیتی کے ملزمان کو 10 گھنٹوں میں گرفتار کر لیا، نقدی اور طلائی زیورات برآمد

پیر مئی 14:01

مانسہرہ۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 14 مئی2018ء) دربند پولیس نے تاجر کے گھر ڈکیتی کر کے والے ملزمان کو 10 گھنٹوں کے اندر گرفتار کر لیا ملزمان سے ایک لاکھ 20 ہزار روپے کی نقدی اور 15 تولے طلائی زیورات بھی برآمد کر لئے، ملزمان نے دوران تفتیش ڈکیتی کا اعتراف جرم بھی کر دیا، ملزمان کی گرفتاری پر تاجر برادری اور سینکڑوں اہلیان دربند نے ریلی نکال کر پولیس کا شکریہ ادا کیا۔

دربند میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے ڈی ایس پی سرکل اوگی بشیر خان، ایس ایچ او تھانہ دربند غلام مصطفیٰ خان، ایڈیشنل ایس ایچ او زرین تاج اور انچارج انوسٹی گیشن نواز خان اور سرفراز نے بتایا کہ دربند کے محلہ گلشن آباد میں دو نقاب پوش مسلح ڈاکو ہفتہ کی صبح 9 بجے کے قریب مقامی تاجر یوسف ذوالفقار کے گھر میں داخل ہوئے اور تاجر سمیت اہل خانہ کو ایک کمرے میں بند کر کے انہیں تشدد کا نشانہ بنایا اور گھر میں موجود 15 تولے طلائی زیورات اور لاکھوں روپے سے زائد کی نقدی اور دیگر سامان لوٹ لیا۔

(جاری ہے)

ڈاکو بعد ازاں عقبی دروازے سے چکمہ دیکر فرار ہونے میں کامیاب ہو گئے۔ واقعہ کی اطلاع ملتے ہی پولیس نے ملزمان کی تلاش شروع کر دی۔ شک کی بنیاد پر ایک ملزم عابد سے پوچھ گچھ شروع کی گئی تو اس نے ڈکیتی کا سارا بھانڈہ پھوڑ دیا۔ ملزمان عابد کی مشاورت پر انور زادہ اور شبیر نے ڈکیتی کی پلاننگ کی اور گھر میں مردوں کی عدم موجودگی کا فائدہ اٹھایا اور ڈکیتی کی۔ لوگوں کے عدم تعاون کے باوجود پولیس نے دن رات ایک کر کے 10 گھنٹوں میں تمام تینوں ملزمان کو گرفتار کر کے ان کے قبضہ سے لوٹی گئی رقم زیورات اور نقدی بھی برآمد کر لی۔ دربند کی عوام نے بروقت کارروائی پر ڈی ایس پی بشیر خان، ایس ایچ او مصطفیٰ، محمد نواز اور جملہ پولیس سٹاف کو زبردست الفاظ میں خراج تحسین پیش کیا۔

متعلقہ عنوان :