لیگی حکومت کے دو سال ، وعدوں کے باوجود انتخابات میں فعال کردار ادا کرنے والی خواتین عہدیدار ان کی ایڈجسٹمنٹ نہ ہوسکی

پیر مئی 17:44

مظفرآباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 14 مئی2018ء) لیگی حکومت کے دو سال ، وعدوں کے باوجود انتخابات میں فعال کردار ادا کرنے والی خواتین عہدیدار ان کی ایڈجسٹمنٹ نہ ہوسکی ، مسلم لیگ ن کے کارکنوں میں شدید اضطراب پایا جانے لگا، ذرائع کیمطابق وزیراعظم آزاد کشمیرراجا فاروق حیدرخان کی سرکردگی میں قائم حکومت کو دو سال ہونے کو ہیں وزراء کی تعداد 12 سے بیس ہوگئی ، بلدیاتی انتخابات نہ سکے ،مختلف اداروں میں سیاسی بنیادوں پر تعیناتیوں میں یعنی خواتین مکمل طورپرنظر انداز کی گئیں جسکے باعث 2016 ء کے انتخابات میں بنیادی کردار اداکرنے والی مسلم لیگ ن کی خواتین عہدیداران سمیت پارٹی کے دیگر شعبہ جات مسلم لیگ ، یوتھ ونگ اور ایم ایس ایف کارکنوں میں شدید مایوسی پائی جاتی ہے جنہوں نے اب آئندہ لائحہ عمل کیلئے مرحلہ دار رابطے شروع کردیئے ہیں خواتین عہدیداران کی ایک ماہ قبل وزیراعظم اور وزیر تعلیم کیساتھ ملاقاتوں اور وعدوں کے باوجود عہدیداران کے سیاسی ایڈجسٹمنٹس نہ ہو سکیںحالانکہ پی پی دور میں خواتین ڈائریکٹرجنرل کشمیر اکیڈمی ، سیکرٹری ریڈ کریسنٹ ، کوارڈینیٹر برائے وزیراعظم سمیت دیگر عہدوں پر تعینات رہ چکی ہیں اب دیکھنا یہ ہیکہ عہدیداران اورکارکنوں کے جاری رابطوں کا سلسلہ کس اقدام پر منتج ہو گا ۔