حکومت برآمد کنندگان کو سیلز ٹیکس کی مد میں 100ارب روپے ریفنڈ کلیمز کی ادائیگی کردے گی، ڈاکٹرمفتاح اسماعیل

پیر مئی 22:02

کراچی (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 14 مئی2018ء) وفاقی وزیر خزانہ ڈاکٹر مفتاح اسماعیل نے کہا ہے کہ رخصتی سے قبل حکومت برآمد کنندگان کو سیلز ٹیکس کی مد میں 100ارب روپے ریفنڈ کلیمز کی ادائیگی کردے گی، منگل کو وفاقی بجٹ قومی اسمبلی سے منظورکرالیا جائے گا جبکہ اگلے چند روز میں برآمدکنندگان کے لئے پیکج کا اعلان بھی کریں گے جس میں برآمدکنندگان کو مراعات اور ترغیبات فراہم کی جائیں گی۔

ہفتے کو پی ایچ ایم اے ہاؤس میں کونسل آف ٹیکسٹائل ایسو سی ایشنز کے تحت برآمدکنندگان کے اجلاس سے خطاب کے دوران انہوں نے کہا کہ رواں سال 23ارب ڈالر کی برآمدات ہوں گی جبکہ اگلے مالی سال میں برآمدات 28ارب ڈالر سے تجاوز کرجائیں گی۔ برآمدات میں تیزی سے اضافہ ہورہاہے روپے کی قدر میں کمی اور حکومت کی طرف سے دی جانے والی مراعات کے باعث مارچ میں برآمدات 24فیصد جبکہ اپریل میں 18فیصد بڑھی ہیں، تجارتی خسارہ کم کرنے کے لئے درآمدات میںمیں 5فیصد کمی اور برآمدات میں 20فیصد افزائش کی ضرورت ہے۔

(جاری ہے)

صنعتوں کی پیداواری لاگت کم کرنے کے لئے حکومت خام مال پر ریگیولیٹری ڈیوٹیز ختم اور کم کررہی ہے۔ انھوں نے ایکسپورٹرز کی تجویز سے اتفاق کرتے ہوئے کہا کہ ڈسپرس اور ری ایکٹو ڈائز جس کا ٹیکسٹائل میں 100فیصد استعمال ہوتا ہے کی ڈیوٹیز بھی 17فیصد سے کم کرکے 5فیصد کر دی جائے گی۔انہوں نے کہا کہ معاشی ترقی درآمدات سے نہیں بلکہ برآمدات بڑھنے سے ہوتی ہے، زرمبادلہ حاصل ہوتا ہے اور بڑے پیمانے پر روزگار کے مواقع پیدا ہوتے ہیں اور اس کے لئے برآمد کنندگان کے ریفنڈ کلیمز سمیت تمام مسائل ترجیحی بنیاد پر حل کئے جارہے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ حکومت نے بینکوں اور کارپوریٹ سیکٹر کے لئے سیلز ٹیکس میں ایک فیصد، کارپوریٹ سیکٹر کے لئے انکم ٹیکس میں ایک فیصد جبکہ تنخواہ دار طبقے کے لئے انکم ٹیکس میں 15فیصد کمی کر کے انہیں ریلیف فراہم کیا ہے، انہوں نے کونسل کے چیئرمین زبیرموتی والاکے مطالبہ پر پرانے ڈی ایل ٹی ایل کی مد میں ریفنڈ کلیمز کی ادائیگی کے لئے ٹائم بارڈ کو ختم کرنے کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ ڈی ایل ٹی ایل کے رکے ہوئے کلیمز کی 50ارب روپے کی ادائیگی کے لئے کوئی متفقہ حل نکال لیا جائے گا۔۔