کوئٹہ ، نوازشریف نے برائے راست ملکی اداروں کو چیلنج کیا ،فوجی عدالتوں میں مقدمہ چلایا جائے ، میر سراج رئیسانی

کلبھوشن یادیو اور نوازشریف میں کوئی فرق نہیںجرم ثابت ہونے پر سڑکوں پر نکل کرنوازشریف اور کل بھوشن یادیو کو سزادی جائے ، چیئرمینبلوچستان متحدہ محاذ

پیر مئی 23:34

ٍکوئٹہ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 14 مئی2018ء) بلوچستان متحدہ محاذ کے چیئرمین وپاکستان پرست رہنماء نوابزادہ میر سراج رئیسانی نے کہا ہے کہ نوازشریف نے برائے راست ملکی اداروں کو چیلنج کیا ہے ان کے خلاف فوجی عدالتوں میں مقدمہ چلایا جائے کلبھوشن یادیو اور نوازشریف میں اب کوئی فرق نہیں رہا اگر یہ ثابت ہوا تو ان کو معاف نہ کیا جائے ورنہ ہم سڑکوں پر نکل کر نوازشریف اور کل بھوشن یادیو کے خلاف سخت احتجاج کرینگے نوازشریف نے چالیس ارب ڈالر سے زائد انڈیا میں سرمایہ کاری کی جس سے ملک کو نقصان ہوا ان خیالات کا اظہار انہوں نے ’’ آن لائن‘‘ سے خصوصی بات چیت کر تے ہوئے کیا انہوں نے کہا ہے کہ میاں محمد نواز شریف سیاسی شہید بننا چا ہتے ہیں مگر ہم سمجھتے ہیں اب ان کو سیاسی شہید بننے کا موقع نہیں ملے گا یہ ان کا خواب ہے اور یہ خواب کبھی بھی شرمندہ تعبیر نہیں ہو گا ممبئی حملوں کے بارے میں جب نوازشریف کو سب کچھ پتہ تھا اور بھارت کے اداروں نے ہمارے حکومت کے ساتھ کوئی تعاون بھی نہیں کیا جب وہ اپنے دور اقتدا رمیں تھے تو انہوں نے ایسا کچھ کیوں نہیں کیا اور اس وقت کیوں خواب خرگوش میں تھے اب کیوں خواب سے اٹھے ہیں اور اس طرح بیانات دے کر اپنی سیاسی ساکھ کو بچانے کی کوشش کر رہے ہیں ہم سمجھتے ہیں کہ نوازشریف نے جو کچھ کیا ہے ان کے خلاف سخت ایکشن لیا جائے اور ان پر مقدمات درج کر کے جیل میں ڈالا جائے انہوں نے کہا ہے کہ الطاف حسین نے بھی ملکی اداروں کے خلاف سازشیں کی تھی جس طرح الطا ف حسین پر پابندی لگائی ہے اسی طرح نوازشریف کی بھی میڈیا پر پابندی لگائی جائے تاکہ ان کو بھی یہی سزا ملے جو سزا الطاف حسین کو ملی ہے الطاف حسین اور نوازشریف میں کوئی فر ق نہیں ہے اس لئے ان کے خلاف سخت سے سخت کا رروائی کی جائے انہوں نے کہا ہے کہ نوازشریف نے برائے راست ملکی اداروں کو چیلنج کیا ہے ان کے خلاف فوجی عدالتوں میں مقدمہ چلایا جائے کلبھوشن یادیو اور نوازشریف میں اب کوئی فرق نہیں رہا اگر یہ ثابت ہوا تو ان کو معاف نہ کیا جائے ورنہ ہم سڑکوں پر نکل کر نوازشریف اور کل بھوشن یادیو کے خلاف سخت احتجاج کرینگے نوازشریف نے چالیس ارب ڈالر سے زائد انڈیا میں سرمایہ کاری کی جس سے ملک کو نقصان ہوا ہے۔