میر واعظ عمر فاروق اور یاسین ملک کی سید علی گیلانی سے ملاقات، کشمیر کی موجودہ مخدوش صورتحال پر تبادلہ خیال

منگل مئی 12:10

سرینگر ۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 15 مئی2018ء) مقبوضہ کشمیرمیں حریت فورم کے چیئرمین میر واعظ عمر فاروق اور جموںوکشمیر لبریشن فرنٹ کے چیئرمین محمد یاسین ملک نے کل جماعتی حریت کانفرنس کے چیئرمین سید علی گیلانی سے حیدرپورہ سرینگر میں ان کی رہائش گاہ پر ملاقات کی اور وادی کشمیر کی موجودہ مخدوش صورتحال پر تبادلہ خیال کیا۔ کشمیر میڈیاسروس کے مطابق مشترکہ حریت قیادت کی ہنگامی ملاقات پیر کو سہ پہر تین بجے کے قریب شروع ہو ئی اور ایک گھنٹے تک جاری رہی۔

ملاقات میں وادی کشمیر کی موجودہ مخدوش صورتحال،کشمیریوںکے قتل عام ،گرفتاریوں اورحریت رہنمائوںا ور کارکنوں کی گھروں و تھانوں میں نظربندی پر تبادلہ خیال کیا گیا۔ اجلاس میں شہیدنوجوانوں کی نماز جنازہ میں شرکت کرنے والے حریت رہنمائوں پر بھی کالاقانون پبلک سیفٹی ایکٹ لاگو کرنے پر شدید تشویش ظاہر کی گئی۔

(جاری ہے)

انہوںنے کہاکہ اس اقدام کا مقصد مقبوضہ علاقے میںخوف و ہراس کا ماحول قائم کرکے پر امن سیاسی سرگرمیوں کے ساتھ ساتھ تعزیت پرسی پر بھی قدغنیںاور بندشیں عائد کرنا ہے۔

اس موقع پر مشترکہ حریت قیادت نے 21 مئی کو شہدائے حول کے برسی اور بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی کے وادی کشمیر کے دورے پربھی تبادلہ خیال کیا۔واضح رہے کہ تینوں حریت رہنمائوں نی8 جولائی 2016ء میں معروف نوجوان کشمیری رہنماء برہان مظفر وانی کی ماورائے عدالت قتل کے بعد متحدہوکر مشترکہ حریت قیادت قائم کرتے ہوئے عوامی انتفادہ کی قیادت کی تھی۔ مشترکہ حریت قیاد ت کے بیشتر اجلاس حیدر پورہ سرینگر میں سیدعلی گیلانی کی رہائش گاہ پر منعقد ہوتی ہیں کیونکہ حریت چیئرمین طویل عرصے سے گھر میں مسلسل نظربند ہیں ۔