پیداپ کیپٹل کی حد225 ملین مقرر کرنے کی تجویز

منگل مئی 13:00

کراچی(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 15 مئی2018ء) سندھ ہائی کورٹ نے 2017 کی پٹیشن سی پی نمبر D-250 میں کریڈٹ بیوروز ایکٹ 2015 کی سیکشن 6 میں بیان کردہ 250.00 ملین روپے کے اداشدہ سرمائے کو قانونی اختیار سے تجاوز قرار دیا ہے۔

(جاری ہے)

سندھ ہائی کورٹ نے 2017 کی پٹیشن سی پی نمبر D-250 میں کریڈٹ بیوروز ایکٹ 2015 کی سیکشن 6 میں بیان کردہ 250.00 ملین روپے کے اداشدہ سرمائے کو قانونی اختیار سے تجاوز قرار دیا ہے ،،عدالت نے بینک دولت پاکستان کو ہدایت کی ہے کہ وہ سیکشن 6 کے مطابق فیصلہ کرے اور عدالتی فیصلے سے ہم آہنگ جاری کر کے کم از کم ادا شدہ سرمائے کا اعلان کرے ، عدالت کی ہدایت پر عملدرآمد کرتے ہوئے اسٹیٹ بینک نے مطلوبہ آرڈر جاری کر دیا ہے جس میں کم از کم ادا شدہ سرمائے کی حد 225.00 ملین روپے تجویز کی گئی ہے جسے کمپنی کے مکمل طور پر سبسکرائب اور ڈپازٹ کردہ ادا شدہ سرمائے کی حیثیت حاصل ہو گی، یہ آرڈر اسٹیٹ بینک کی ویب سائٹ پر بھی دستیاب ہے ۔

متعلقہ عنوان :