جوہری معاہدہ بچانے کے لیے امریکہ سے دوبارہ مذاکرات نہیں کریں گے،ایران

شام پر دوبارہ حملہ کیا تو صہیونی ریاست کو پوری طاقت سے جواب دیا جائے گا،مشیرسپریم لیڈرکا بیان

بدھ مئی 13:46

تہران(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 16 مئی2018ء) ایران کے رہبر انقلاب آیت اللہ علی خامنہ ای کے مشیر اعلیٰ علی اکبر ولایتی نے کہا ہے کہ ان کا ملک جوہری معاہدے کو بچانے کے لیے کسی قسم کے مذاکرات نہیں کرے گا۔ ایران اپنے میزائل پروگرام پر کسی قسم کا سمجھوتا نہیں کر سکتا اور نہ اس پر کوئی بات کی جائے گی۔

(جاری ہے)

عرب ٹی وی کے مطابق علی اکبر ولایتی نے ایک بیان میں اسرائیل کو خبردار کیا کہ اگر اس نے شام پر دوبارہ حملہ کیا تو اس کے سنگین نتائج سامنے آئیں گے اور صہیونی ریاست کو پوری طاقت سے جواب دیا جائے گا۔

خیال رہے کہ گذشتہ ہفتے امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے سنہ 2015ء میں ایران اور چھ عالمی طاقتوں کے درمیان تہران کے جوہری پروگرام پر طے پائے معاہدے سے علیحدگی اختیار کر لی تھی۔۔اسرائیل کا کہنا ہے کہ اس نے شام میں ایرانی میزائل حملوں کے رد عمل میں کارروائی کی تھی۔