بھارتی ریاست کرناٹک میں بے جے پی سرفہرست،

کانگریس نے بھی فارمولہ پیش کردیا کانگریس کاتیسرے نمبرپرآنیوالی جماعت کے ساتھ ملکرحکومتی سازی کا منصوبہ،بے جے پی کا الزام

بدھ مئی 13:46

نئی دہلی(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 16 مئی2018ء) بھارتی ریاست کرناٹک میں ہونے والے انتخابات میں بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی کی جماعت بھارتیہ جنتا پارٹی سر فہرست ہے تاہم وہ حکومت سازی کے لیے درکار واضح برتری حاصل کرنے میں ناکام نظر آتی ہے۔۔بھارتی ٹی وی کے مطابق بھارت کی 60 ملین سے زائد آبادی والی ریاست کرناٹک میں اپوزیشن کانگریس پارٹی کی حکومت تھی تاہم 12 مئی کو ہونے والے انتخابات کے اب تک سامنے والے نتائج کے مطابق اس جماعت کو 78 نشستیں ملی ہیں۔

2014ء کے انتخابات میں کانگریس کو کرناٹک میں 122 نشستیں ملی تھیں۔ کرناٹک سیاسی حوالے سے اہم ترین ریاستوں میں شمار ہوتی ہے اور بھارت کا گلوبل آئی ٹی حب بنگلور بھی اسی ریاست میں واقع ہے۔کرناٹک میں ہونے والے ان ریاستی انتخابات کو اس لیے بھی اہمیت حاصل ہے کیونکہ بھارت میں وفاقی انتخابات آئندہ برس منعقد ہونا ہیں اور یہ انتخابی نتائج بڑی سیاسی جماعتوں کی عوامی مقبولیت کا پیمانہ قرار دیے جا رہے ہیں۔

(جاری ہے)

بھارت کی کل انتیس ریاستوں میں سے اکیس پر قوم پرست بی جے پی کی حکومت ہے۔۔بھارتی الیکشن کمیشن کا کہناتھا کہ سہ پہر تک آنے والے نتائج کے مطابق بی جے پی نے 104 سیٹیں جیتی ہیں۔ بھارتی وزیراعظم نریندر مودی کی جماعت بھارتیہ جنتا پارٹی کو اس ریاست میں حکومت سازی کے لیے کم از کم 113 سیٹوں کی ضرورت ہے۔ تاہم کانگریس پارٹی کے سربراہ راہول گاندھی نے اعلان کیا کہ وہ ان انتخابات میں تیسرے نمبر پر موجود جماعت جنتا دل کی غیر مشروط حمایت کو تیار ہیں کہ وہ کرناٹک میں حکومت بنا لے۔

کانگریس پارٹی کی طرف سے کرناٹک کے وزیر اعلیٰ رہنے والے سدارامئیا نے بنگلور میں صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہاکہ بی جے پی کو حکومت سے باہر رکھنے کے لیے یہی بہترین طریقہ ہے۔دوسری طرف بی جے پی نے کانگریس پارٹی پر الزام عائد کیا ہے کہ وہ اپنی شرمناک شکست سے بچنے کے لیے ووٹروں سے غداری کر رہی ہے۔ کرناٹک کے لیے بی جے پی کی طرف سے وزارت اعلیٰ کے امیدوار بی ایس یادیورپا نے صحافیوں سے گفتگو میں کہاکہ لوگوں کی طرف سے شکست سے دوچار کیے جانے کے باوجود کانگریس پچھلے دروازے سے داخل ہونے کی کوشش کر رہی ہے۔