کوئی بھی شخص انفرادی طور پر قومی سلامتی کمیٹی اعلامیے کو مسترد نہیں کر سکتا، اعجاز الحق

نواز شریف اپنی چوری چھپا نے کیلئے قومی سلامتی کے اداروں کوتنقید کا نشانہ بنا رہے ہیں، نواز شریف کا قومی کمیشن بنانے کا مطالبہ کرنا قوم کے ساتھ مذاق ہے ، اس کی مذمت کرتے ہیں، حکمران جماعت ایک نہایت پیچیدہ معاملے پر متضاد بیانات دیکر معاملے کو مزیر پیچیدہ بنا رہے ہیں سربراہ ضیا لیگ کی پارلیمنٹ ہائوس کے باہر میڈیا سے گفتگو

بدھ مئی 22:17

اسلام آباد(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 16 مئی2018ء) پاکستان مسلم لیگ(ضیا ) کے سربراہ اعجاز الحق نے کہا ہے کہ کوئی بھی شخص انفرادی طور پر قومی سلامتی کمیٹی کے اعلامیے کو مسترد نہیں کر سکتا، نواز شریف اپنی چوری چھپا نے کیلئے پاکستان کی قومی سلامتی کے اداروں کوتنقید کا نشانہ بنا رہے ہیں، نواز شریف کا قومی کمیشن بنانے کا مطالبہ کرنا قوم کے ساتھ مذاق ہے جس کی مذمت کرتے ہیں، حکمران جماعت ایک نہایت پیچیدہ معاملے پر متضاد بیانات دیکر معاملے کو مزیر پیچیدہ بنا رہے ہیں۔

وہ بدھ کو پارلیمنٹ ہائوس کے باہر میڈیا سے گفتگو کر رہے تھے۔ انہوں نے کہا کہ حکمران جماعت ایک نہایتپیچیدہ معاملے پر متضاد بیانات دیکر معاملے کو مزیر پیچیدہ بنا رہے ہیں۔قومی سلامتی کا اجلاس وزیر اعظم کی منظوری کے بغیر بلایا ہی نہیں جا سکتا۔

(جاری ہے)

اجلاس میں وزیر اعظم، تینوں مسلح افواج کے سربراہان، وزارت دفاع اور وزارت خارجہ نے متفقہ طور پر نواز شریف کے الزامات کو رد کیا ہے۔

کوئی بھی شخص انفرادی طور پر قومی سلامتی کمیٹی کے اعلامیے کو مسترد نہیں کر سکتا۔ نواز شریف اپنی چوری چھپا نے کیلئے پاکستان کی قومی سلامتی کے اداروں کوتنقید کا نشانہ بنا رہے ہیں۔ ان کا قومی کمیشن بنانے کا مطالبہ کرنا قوم کے ساتھ مذاق ہے جس کی مذمت کرتے ہیں۔ اگر ایسے ملک کے اندر کمیشنبننے لگ گئے تو جس ملزم کو سزا دی گئی وہ کمیشن کا مطالبہ کرنے لگ جائے گا۔ فاٹا صلاحات پر حکومت پہلے ہی بہت دیر کر چکی ہے جس کو عوام اور قبائلی علاقوں کے عوام بھگت بھی رہے ہیں۔ اب بھی ٹائم ہے، اگر حکومت سنجیدگی سے اقدامات لے تو فاٹا کا خیبر پختونخوا کے ساتھ انضمام ہو سکتا ہے۔ یہ کام ہو جائے تو جو باقی رہ جائے گا وہ اگلی حکومت کر لے گی