شانگلہ ایکشن کمیٹی کا سانحہ کوئٹہ میں شہید ہونیوالے کان کنوں کے وراثاء کے حقوق کیلئے گرینڈ جرگہ

کسی کو بھی مزدوروں کے حقوق پر قبضہ نہیں کرنے دیں گے ، مقررین کا خطاب

بدھ مئی 21:29

ا لپوری(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 16 مئی2018ء) شانگلہ ایکشن کمیٹی کا سانحہ کوئٹہ میں شہید ہونیوالے کن کنوں کے وراثاء کے حقوق کیلئے گرینڈ جرگہ کا انعقاد، شانگلہ سے تعلق رکھنے والے جان بحق مزدوروں کے وراثاء کیساتھ ہر فورم پر آواز اٹھائیں گے ، کسی کو بھی مزدوروں کے جائز حقوق پر قبضہ نہیں ہونے دیں گے،گرانٹ کو پنجاب کے برابر کرنے سمیت کوئلہ کان مزدوروں کی تحفظ کیلئے عملی اقدامات سمیت کئی قراردادیں متفقہ طورپر منظور، گرینڈ جرگہ شانگلہ ایکشن کمیٹی بار کے صدر محمد نعیم خان ایڈوکیٹ کی جانب سے بلایا گیا تھا گرینڈ جرگہ میں شانگلہ کے سیاسی اور غیر سیاسی نمائندگان نے کثیر تعدا د میں شرکت کی جنہوں نے مطالبہ کیا کہ مزدوروں کے حقوق کیلئے جدوجہد جاری رہے گا مطالبات حل نہ کئے گئے تو وزیراعظم ہاوس کے سامنے شانگلہ کے سینکڑوں بیواؤں اور یتمیوں کے ساتھ احتجاجی دھرنا دیا جائے گا چیف جسٹس آف پاکستان نوٹس لیں کان کنوں کو تحفظ فراہم کیا جائے مقررین کا جرگے سے خطاب جرگے سے خطاب کرتے ہوئے محمدنعیم خان صدر بار ایسوسی ایشن ،،ڈاکٹر محمود نواز خان پی ٹی آئی ،متوکل خان اے این پی ،سعودخان کیوڈبلیو پی ،شاہ فواد خان ایڈوکیٹ ،رشیدکمال،جمیل خان، عابد یار و دیگر نے خطاب کے دوران کہا کہ مزید اپنے نوجوانوں کے جنازے نہیں اُٹھا سکتے اب وقت ایا ہے کہ عملی طور پر کام کیا جائے مزدوروں کے لواحقین کو پنجاب کے برابر تیس تیس لاکھ کا معاوضہ دیا جائے انٹر نیشنل لیبر قوانین کو پاکستان میں لاگو کیا جائے لیبر کالونی میں کوئلہ مزدوروں کو گھر الاٹ کیئے جائے مزدوروں کے تحفظ کے لئے اقدامات کرکے جدید آلات فراہم کئے جائے واقعے میں غفلت پر انسپکٹر اف مائین اور ذمہ داروں کے خلاف چیف جسٹس آف پاکستان کے سربراہی میں فل بینچ کمیشن تشکیل دے کر تحقیقات کئے جائے متوکل خان کا کہناتھا کہ آج کل چیف جسٹس چھوٹے چھوٹ ایشو اٹھا کرسوموٹو لیتے ہیں لیکن ان کو شانگلہ کے محنت کش مزدور نظر نہیں آتے ڈاکٹر محمود نواز خان نے کہا کہ آج افسوس اس بات پر ہے کہ اگر ہمارے حکمران اور منتخب نمائندے ان غریبوں کیلئے کچھ کرلیتے تو آج ہمیں یہ دن نہیں دیکھنا پڑتا ان محنت کشوں کے موت کے زمہ دار ہم سیاست دان اور منتخب ارکان ہے ان کو شرم سے ڈوب مرنا چاہیئے یاد رہے کہ اس جرگے میں شانگلہ کی تمام سیاسی لیڈر شپ کو دعوت دی گئی تھی جسمیں انجینئر امیرمقام مشیر وزیراعظم،،بھائی ایم این اے جبکہ فرزند امیرمقام ناظم اعلی شانگلہ نیازاحمد خان ،ایم پی اے رشاد خان ،شوکت یوسفزئی ،سدیدالرحمان نے شرکت نہیں کی جس پر شانگلہ ایکشن کمیٹی اور متاثرین کوئلہ نے سخت غم غصے کا اظہار کیا اور کہا کہ ووٹ لینے کیلئے سب حاضری دیتے ہیں لیکن درد کی اس گھڑی میں کسی نے ہمارا ساتھ نہیں دیا صرف فوٹو سیشن کیلئے آتے ہیں جرگے میں یہ بھی فیصلہ کیاگیا کہ احتجاجی تحریک کو آگے بڑھائنگے کل بھی احتجاج ہوگا جب تک مطالبات تسلیم نہیں کئے جاتے پی ٹی آئی کے محمود نواز خان نے کہا کہ اگر ہمارے وزیراعلی یا حکومت نے عملی اقدامات نہیں اُٹھائے تو احتجاج کرنے والوں کا ساتھ دونگا اور ان کے ساتھ آخری دم تک کھڑا رہونگا۔