انٹر نیشنل کرکٹ میں واپسی کے بعد وکٹیں لینے میں مشکل کیوں ہورہی ہے ؟ محمد عامر نے بتا دیا

جمعرات مئی 17:03

انٹر نیشنل کرکٹ میں واپسی کے بعد وکٹیں لینے میں مشکل کیوں ہورہی ہے ؟ ..
مالاہائیڈ (ا ردو پوائنٹ تازہ ترین اخبار۔17مئی 2018 ء) قومی کرکٹ ٹیم کے نوجوان فاسٹ با ﺅ لر محمد عامر نے ایک مرتبہ پھر لارڈز کرکٹ گراﺅنڈ کے تاریخی آنرز بورڈ پر اپنا نام دیکھنے کی خواہش ظاہر کرتے ہوئے کہا ہے کہ اس مرتبہ وہ جس پاکستانی ٹیم کے ساتھ دورے پر آئے وہ نوجوان کھلاڑیوں پر مشتمل ہے تاہم ہر ایک لارڈز کے تاریخی گراﺅنڈ میں کھیلنے کیلئے کافی پرجوش ہیں۔

ایک انٹر ویو کے دوران 25سالہ محمد عامر کا کہنا تھا کہ ہر کھلاڑی یہی چاہتا ہے کہ اس کا نام لارڈز کے آنرز بورڈ پر آئے اور وہ بھی اپنی اچھی کارکردگی کی بدولت دوسری مرتبہ یہی چاہتے ہیں۔پانچ سال بعد انٹرنیشنل کرکٹ میں واپسی کے بعد سوئنگ میں کمی پر ان کا کہنا تھا کہ 2016ءمیں جب کھیل میں دوبارہ قدم رکھا تو وہ یکسر بدل چکا تھا اور وہ پابندی کے عرصے میں کسی قسم کی ٹریننگ بھی نہیں کر سکے تھے،پانچ سال کے پابندی کے عرصے میں کرکٹ کافی تیز اور وکٹیں نسبتاً سست ہوگئیں جس کی وجہ سے انہیں باﺅلنگ میں مشکلات کا سامنا رہا تاہم وہ گیند کو سوئنگ کرنے کی کوشش کر رہے ہیں کیونکہ یہی وکٹوں کے حصول کا اہم ترین پہلو بھی ہے۔

(جاری ہے)

محمد عامر نے کھیل میں پانچ سال کے بعد واپسی پر اپنی حمایت کیلئے پاکستان کرکٹ بورڈ کے علاوہ ساتھی پلیئرز شاہد آفریدی،،،مصباح الحق اور موجودہ پاکستانی کپتان سرفراز احمد کا شکریہ ادا کیا ،پیسر کا کہنا تھا کہ ان کھلاڑیوں کی وجہ سے وہ ایک مرتبہ پھر انٹرنیشنل کرکٹ میں قدم رکھنے کیلئے مناسب اعتماد حاصل کرپائے۔ محمد عامر کا کہنا تھا کہ وہ بعض مشکلات کے باوجود اپنے کھیل میں بتدریج بہتری پیدا کر رہے ہیں اور انہیں قوی امید ہے کہ انگلینڈ کیخلاف دو ٹیسٹ میچوں کی سیریز میں ان کی کارکردگی نمایاں رہے گی۔