سپریم کورٹ ،کوئٹہ چرچ دھماکہ متاثرین کو معاوضے کی ادائیگی میں تاخیر بارے از خود نوٹس کیس کی سماعت،ممبر معاوضہ کمیٹی ڈاکٹر علی سے بیان حلفی طلب

جمعرات مئی 19:00

اسلام آباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 17 مئی2018ء) سپریم کورٹ نے کوئٹہ میں چرچ دھماکے کے متاثرین کو معاوضے کی ادائیگی میں تاخیر بارے از خود نوٹس کیس میں معاوضہ کمیٹی کے ممبر سرجن ڈاکٹر علی مردان سے بیان حلفی طلب کرلیا ۔ جمعرات کوجسٹس عمر عطا بندیال کی سربراہی میںدو رکنی بینچ نے کیس کی سماعت کی۔ ا س موقع پرکرسچین کمیٹی کے نمائندے نے پیش ہوکرعدالت کوآگاہ کیا کہ متاثرہ خاندانوں کیلئے وزیراعظم نے جس پیکج کااعلان کیا ہے اس میں سے 72 لاکھ روپے کم ہیں ہمارے ساتھ دہشت گردی ہوئی اس کے باوجود ہم نے اپنے عزیزوں کو امن و امان سے دفن کیا، لواحقین، سماعت کے دورا ن عدالت نے ڈی سی کوئٹہ سے استفسار کیا کہ آخرامدادی رقم کی تقسیم میں اتنا وقت کیوں لگا ہے عدالت کواس معاملے کے بارے میں وضاحت دی جائے، جس پرڈی سی کوئٹہ نے بتایا کہ میڈیکو لیگل رپورٹ میں تاخیر کی وجہ سے رقم کی ادائیگی میں تاخیر ہوئی ہے، توجسٹس اعجاز الااحسن نے استفسارکیا کہ کیا رپوورٹ دینے میں اتنا وقت لگتا ہے یہ توبہت زیادہ ہے پانچ ماہ ہوگئے ہیںاوررپورٹ نہیں آرہی ، جو ناقابل قبول ہے ۔

(جاری ہے)

بعد ازاں عدالت نے میڈیکل لیگل رپورٹ میں تاخیرپر معاوضہ ادائیگی کمیٹی کے ممبرسرجن ڈاکٹر علی مردان سے بیان حلفی طلب کر تے ہوئے مزید سماعت جون کے دوسرے ہفتے تک ملتوی کردی ۔