ہیٹ ویو کی پیش گوئی پر کے ایم سی کے تمام اسپتالوںکی انتظامیہ کو ہائی الرٹ رہنے کے احکامات جاری

سمندری ہوائیں بندہونے اوردرجہ حرارت بڑھنے سے ہیٹ ویو کے مریضوں میں اضافہ ہو سکتا ہے،میئر کراچی

جمعہ مئی 19:33

ہیٹ ویو کی پیش گوئی پر کے ایم سی کے تمام اسپتالوںکی انتظامیہ کو ہائی ..
کراچی (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 18 مئی2018ء) میئر کراچی وسیم اختر نے محکمہ موسمیات کی ہیٹ ویو کی پیش گوئی پر کے ایم سی کے تمام اسپتالوںکی انتظامیہ کو ہائی الرٹ رہنے کے احکامات جاری کردیئے، انہوں نے کہا کہ کے ایم سی کے اسپتالوں میں اس حوالے سے کوئی کوتاہی برداشت نہیں کی جائے گی،ہیٹ ویوز کے دوران اسپتالوں کے مختلف وارڈز میں ڈاکٹرز، پیرامیڈیکل اسٹاف اور ادویات کی موجودگی کو یقینی بنائی جائے کیونکہ سمندری ہوائیں بندہونے اوردرجہ حرارت بڑھنے سے ہیٹ ویو کے مریضوں میں اضافہ ہو سکتا ہے، شہر میں یوٹیلیٹی سروسز فراہم کرنے والے اداروں کا بھی یہ فرض بنتا ہے کہ وہ شدید گرم موسم میں شہریوں کے صبر کا امتحان نہ لیں، کے الیکٹرک شہریوں کو ہیٹ اسٹروک سے محفوظ رکھنے کے لئے رمضان المبارک کے مقدس مہینے میں شہریوں کے روزے سے ہونے کے باعث شدید گرمی میں لوڈ شیڈنگ نہ کرے،واٹربورڈ گرم موسم میں شہر کے مختلف علاقوں میں بلا تعطل پانی کی فراہمی یقینی بنائے،شہر کے تمام دیگر سرکاری اور نجی اسپتال بھی ہیٹ اسٹروک سے متاثرہ مریضوں کو ترجیحی بنیادپر فوری طبی امداد کی فراہمی یقینی بنائیں،یہ بات انہوں نے محکمہ ہیلتھ اینڈ میڈیکل سروسز اور ریسکیو1122 ،ایمبولینس سروس کے افسران کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہی جو اس حوالے سے فوری طور پر طلب کیا گیا تھا، میئر کراچی نے شہریوں سے کہا ہے کہ شہری بلا ضرورت گھر سے نہ نکلیں اور سفر کرنے میں احتیاط برتیں اورشدید گرمی اور رمضان المبارک کے پیش نظر ہرممکن احتیاطی تدابیر اختیار کریں، میئر کراچی کی ہدایت پر کے ایم سی کے تمام بڑے اسپتال ، ریسکیو 1122 ، ایمبولینس سروس اور متعلقہ دفاتر شہر میں ہیٹ ویوز کے دوران 24 گھنٹے کھلے رہیں گے اور متعلقہ عملے کی تمام چھٹیاں منسوخ کردی گئی ہیں، کے ایم سی اسپتالوں اور ریسکیو 1122 کو مزید ہدایت جاری کی گئی ہے کہ تمام فوکل پرسن ڈیوٹی کے اوقات میں اپنی موجودگی کو یقینی بنائیں اور ہیٹ ویوز کے مریضوں کے علاج معالجے کے حوالے سے روزانہ کی بنیاد پر سینئر ڈائریکٹر میڈیکل سروسز کو رپورٹ ارسال کریں، میئر کراچی وسیم اختر نے متعلقہ افسران کو ہدایت کی ہے کہ کراچی میں درجہ حرارت میں اضافے اور ہیٹ ویوز کے پیش نظر مستقل بنیادوں پر انتظامات کئے جائیں ، رمضان المبارک کے مہینے میں شدید گرمی کے پیش نظر تمام اضلاع میںواقع اسپتالوں اور دیگر طبی اداروں میں ہیٹ اسٹروک سے متعلق بھرپور انتظامات کئے جائیں، ہیٹ اسٹروک کے مریضوں کو فوری امداد فراہم کرنے کے لئے ڈاکٹرز، پیرامیڈیکل اسٹاف، مناسب مقدار میں ادویات اور دیگر ضروریات کو یقینی بنایا جائے، انہوں نے کہا کہ ماضی کے تجربے سے سبق حاصل کرتے ہوئے ایسے احتیاطی اقدامات اور کوششیں کی جائیں جن کے ذریعے شہر میں ہیٹ اسٹروک جیسی صورتحال میں قیمتی جانوں کا ضیاع نہ ہو، محکمہ موسمیات سے روزانہ کی بنیاد پر رابطہ رکھا جائے، ہیٹ اسٹروک سے متاثرہ افراد کو فوری طبی امداد کے بعد کے ایم سی اسپتالوں میں قائم وارڈ ز میں پہنچایا جائے، انہوں نے کہا کہ شہریوں کو ہیٹ اسٹروک سے بچائو اور محفوظ رہنے کے لئے آگاہی مہم کو زیادہ موثر انداز میں چلانے کی ضرورت ہے، گلو بل وارمنگ کی وجہ سے دنیا بھر میں ماحولیاتی تبدیلیاں تیزی سے رونما ہوئی ہیں اس صورتحال سے نمٹنے کے لئے تمام شہری اداروں کو مربوط انداز سے ایک دوسرے کے ساتھ مل کر ان حالات کا مقابلہ کرنا ہوگا، ، انہوں نے کہا کہ وہ ان تمام سینٹرز پر انتظامات کا جائزہ لینے کے لئے خود بھی وقتاً فوقتاً ان مراکز کا دورہ کریں گے، میئر کراچی نے کہا کہ ہیٹ اسٹروک سے احتیاطی تدابیر کے ذریعے بچا جاسکتا ہے اس لئے شہریوں کو اس سے متعلق آگاہی فراہم کرنے کی ضرورت ہے، انہوں نے کہا کہ گرمی کے موسم میں شہری اپنی ضروریات کے لئے گھروں سے نکلتے وقت پانی ساتھ رکھیں اور شدید گرمی میں کوشش کی جائے کہ گرمی اور دھوپ سے بچا جائے، انہوں نے کہا کہ اس سلسلے میں تمام تر احتیاطی تدابیر خود بھی اختیار کریں اور شہری اپنی فیملیز کو بھی اس کا پابند بنائیں۔