ٹریفک قوانین کی خلاف ورزیوں پر کوئی سمجھوتہ نہ کیا جائے، ایس ایس پیز ٹریفک کو بھی جلد ہی نئی گاڑیاں دی جائیں گی

ٹریفک پولیس کیلئے علیحدہ ہیڈکوارٹر کے قیام کا اعلان ،کراچی کے 88 سیکشن افسران میں نئی ہیوی بائیکس تقسیم آئی جی سندھ اے ڈی خواجہ کی تقریب سے خطاب ، پولیس افسران کی بڑی تعداد میں شرکت

جمعہ مئی 22:02

ٹریفک قوانین کی خلاف ورزیوں پر کوئی سمجھوتہ نہ کیا جائے، ایس ایس پیز ..
کراچی(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 18 مئی2018ء) آئی جی سندھ اے ڈی خواجہنے کہا کہ ٹریفک قوانین کی خلاف ورزیوں پر انسدادی اقدامات اور قواعد وضوابط کے مطابق کاروائیوں پر کوئی سمجھوتہ نہ کیا جائے، ایس ایس پیز ٹریفک کو بھی جلد ہی نئی گاڑیاں دی جائیں گی اس موقع پر انہوں نے ٹریفک پولیس کے علیحدہ سے ہیڈکوارٹر کے قیام کا بھی اعلان کیا،،کراچی کے 88 سیکشن افسران میں نئی ہیوی بائیکس تقسیم ،جبکہ 12 ہیوی بائیکس ٹریفک پولیس کراچی کے تحت پائلٹ ڈیوٹی پر تعینات پولیس افسران کو دی گئیں۔

انہوں نے جمعہ پولیس ہیڈ کوارٹرز گارڈن ساؤتھ میں منعقدہ تقریب تقسیم نیو ہیوی بائیکس میں بطور مہمان خصوصی شرکت کی،تقریب میں انکی آمد پر ڈی آئی جی ٹریفک کراچی نے استقبال کیا جبکہ پولیس کے چاک وچوبند دستے نے گارڈ آف آنر/جنرل سلام پیش کیا۔

(جاری ہے)

آئی جی سندھ نے تقریب میں آمد کے ساتھ ہی پہلے شہدائے پولیس کی یادگار پر گئے فاتحہ خوانی کی اور پھولوں کی چادر چڑھائی۔

زونل ڈی آئی جیز،ایس ایس پی ساؤتھ کراچی سمیت ٹریفک پولیس کراچی کے زونل ایس ایس پیز نے بھی تقریب میں شرکت کی۔آئی جی سندھ نے منعقدہ تقریب کی مناسبت سے کراچی کے 88 سیکشن افسران میں نئی ہیوی بائیکس تقسیم کیں جبکہ 12 ہیوی بائیکس ٹریفک پولیس کراچی کے تحت پائلٹ ڈیوٹی پر تعینات پولیس افسران کو دی گئیں۔اس موقع پر ڈی آئی جی ٹریفک کراچی عمران یعقوب منہاس نے شہر کے مختلف مقامات مرکزی شاہراہوں مساجد امام بارگاہوں نماز تروایح کے دیگر کھلے مقامات متبادل روٹس وغیرہ کے لیئے اختیار کردہ اقدامات کا تفصیلی احاطہ کیا اور باالخصوص رمضان المبارک کے دوران ٹریفک پولیس اقدامات کی تمام تر ترجیحات سے آئی جی سندھ کو آگاہی دی۔

انہوں نے بتایا کہ 4000 مذید اہلکار ٹریفک پولیس میں شامل ہونے سے افرادی قوت میں بہتری آگئی ہے اور اب سات ہزار سے زائد اہلکار شہر میں ٹریفک کنٹرول کررہے ہیں۔آئی جی سندھ نے کہا کہ ٹریفک قوانین کی خلاف ورزیوں پر انسدادی اقدامات اور قواعد وضوابط کے مطابق کاروائیوں پر کوئی سمجھوتہ نہ کیا جائے اور انتہائی غیرجانبدارنہ اقدامات کی بدولت ٹریفک کی مختلف مہم کو کامیاب بناتے ہوئے ہیلمٹ سیٹ بیلٹ کے استعمال سمیت زیبرا کراسنگ ٹریفک لائٹ سگنلز روڈ لین ون وے ٹریفک ودیگر پر عمل درآمد کو یقینی بنایا جائے۔

انہوں نے کہا کہ فرائض منصبی کے تقاضوں کو سامنے رکھتے ہوئیٹریفک پولیس افسران اور جوان شہریوں سے خوش اخلاقی سے پیش آئیں اور کسی بھی قسم کی شکایت کا موقع ہر گز نہ دیں۔انہوں نے کہا کہ ایس پیز ٹریفک افطار کے اوقات کے دوران سڑکوں شاہراہوں پر اپنی موجودگی کو یقینی بنائیں اور ٹریفک کی روانی کے حوالے سے تمام تر اقدامات پر عمل درآمد اپنی نگرانی میں کرائیں۔

آئی جی سندھ نے کہا کہ ایس ایس پیز ٹریفک کو بھی جلد ہی نئی گاڑیاں دی جائیں گی اس موقع پر انہوں نے ٹریفک پولیس کے علیحدہ سے ہیڈکوارٹر کے قیام کا بھی اعلان کیا۔انہوں نے کہا کہ شہر میں بھاری گاڑیوں کے داخلوں کے اوقات پر عدم عمل درآمد کے حوالے سے شکایات کو ختم کیا جائے اور اس حوالے سے عمل درآمد کو ہر حال میں یقینی بنایا جائے بصورت دیگر تمام تر ذمہ داری متعلقہ ایس پی اور سیکشن آفیسر ٹریفک پر عائد کی جائیگی۔