ٹیکساس میں فائرنگ سے جاں بحق ہونے والی پاکستانی طالب علم سبیکا شیخ کے والد غم سے نڈھال

سبیکا شیخ خواتین کے لیے کچھ کرنا چاہتی تھی، چھوٹی سی عمر میں بڑی بڑی باتیں کرتی تھی؛ ٹیکساس میں جاں بحق پاکستانی طالب علم کے والد کی میڈیا سے گفتگو

Muqadas Farooq مقدس فاروق اعوان ہفتہ مئی 10:53

ٹیکساس میں فائرنگ سے جاں بحق ہونے والی پاکستانی طالب علم سبیکا شیخ ..
لاہور(اردو پوائنٹ تازہ ترین اخبار۔ 19 مئی 2018ء) ٹیکساس میں فائرنگ سے جاں بحق ہونے والی پاکستانی طالب علم سبیکا شیخ کے والد غم سے نڈھال ہیں۔سبیکا شیخ کے والد عبد العزیز شیخ کا کہنا ہے کہ بیٹی کے جاں بحق ہونے کا علم میڈیا کے زریعے ہوا۔ سبیکاخواتین کے لیے کچھ کرنا چاہتی تھی۔چھوٹی سی عمر میں بڑی بڑی باتیں کرتی تھی۔سبیکا کے والد کا مزید کہنا تھا کہ ٹی وی پر جب خبر دیکھی کے ٹیکساس کے ایک اسکول میں فائرنگ ہوئی ہے تو میں نے سبیکا کو فون کیا لیکن وہ نہیں اٹھا رہی تھی۔

پھر میں نے وہاں کے لوکل کورڈینیٹر سے رابطہ کر کے بیٹی سے متعلق پوچھا تو انہوں نے بتایا کہ ابھی اس متعلق کچھ نہیں کہا جا سکتا۔ لیکن رات 11 بجے مجھے ان کی کال آئی اور انہوں نے سبیکا کے جاں بحق ہونے کی تصدیق کر دی۔

(جاری ہے)

سبیکا کے والد کا مزید کہنا تھا کہ میری بیٹی بہت ذہین تھی۔وہ پاکستان کے لیے کچھ کرنا چاہتی تھی۔سبیکا کے تایاکا میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہنا تھا کہ سبیکا نے بے شمار میڈلز حاصل کر رکھے تھے۔

جب کہ سبیکا کا بھائی بھی اپنی بہن کے جاں بحق ہونے کی خبر سننے کے بعد غم سے نڈھال ہو گیا۔سبیکا کے بھائی کا کہنا تھا کہ سبیکا نے 8 جون کو واپس آنا تھا ہم نے عید کے بعد  چھٹیوں کے لیے بہت کچھ پلان کر رکھا تھا۔سبیکا کے کلاس فیلوز کو بھی سبیکا کی موتکا یقین نہیں ہو رہا۔اور ان کا کہنا تھا کہ سبیکا بہت ذہین طالب علم تھی۔یاد رہے کہ آج امریکی ریاست ٹیکساس کے شہر سانتافی کے ہائی اسکول میں فائرنگ کے نتیجے میں 10 افراد ہلاک جبکہ متعدد زخمی ہوگئے ۔

امریکی میڈیا کی رپورٹ کے مطابق فائرنگ سے ایک پولیس افسر بھی زخمی جبکہ حملہ آور کو گرفتار کرلیا گیا ہے۔۔۔حملہ آور ممکنہ طور پر اسکول کا طالب علم ہے جس نے کلاس میں گھس کر شاٹ گن سے فائرنگ کردی۔ سنتافی کے شیرف ایڈ گنزالیز کے مطابق حملہ آور کے علاوہ ایک اور شخص کو بھی حراست میں لیا گیا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ مرنے والوں میں زیادہ تر طالب علم ہیں۔