حیدر آباد میں انسانیت سوز واقعہ

پیسوں کی لالچ میں خاتون نے خاوند کے ساتھ مل کر بھابھی کو قتل کردیا

Sumaira Faqir Hussain سمیرا فقیرحسین ہفتہ مئی 14:01

حیدر آباد میں انسانیت سوز واقعہ
حیدرآباد (اُردو پوائنٹ تازہ ترین اخبار۔ 19 مئی 2018ء) : حیدر آباد میں ایک انسانیت سوز واقعہ دیکھنے میں آیا جہاں ایک خاتون نے پیسوں کی لالچ میں اپنے خاوند سے مل کر اپنی بھابھی کا قتل کردیا۔ میڈیا رپورٹ کے مطابق حیدر آباد کی رہائشی ایک سفاک خاتون نے پیسوں کی لالچ میں اپنے شوہر کے ساتھ مل کر اپنی بھابھی کو موت کے گھاٹ اُتار دیا اور لاش کے ٹکڑے کر کے نہر میں پھینک دئے۔

ایس ایس پی حیدر آباد پیر محمد شاہ نے اس معاملے پر بریفنگ دیتے ہوئے بتایا کہ تھانہ بلدیہ میں شادی شدہ خاتون حنا کی گمشدگی کی رپورٹ درج ہوئی۔ 15 مئی کو پنجابی نہر سے گمشدہ ہونے والی لڑکی حنا کا سر ملا، حنا کا سر ملنے پر اہل خانہ پر یہ خبر قیامت بن پر ٹوٹی۔ مقتولہ حنا کے والد نے شُبہ ظاہر کیا کہ حنا کے قتل میں حنا کا شوہر اور بہنوئی ملوث ہیں۔

(جاری ہے)

پولیس نے حنا کی نند اور نندوئی کو بُلوا کر تفتیش کی تو دونوں نے پولیس کے سامنے اپنے جُرم کا اعتراف کر لیا۔ نند اور نندوئی نے اپنے جُرم کا اعتراف کرتے ہوئے پولیس کو بتایا کہ انہوں نے پہلے حنا کا گلہ دبایا اور سانس بند ہونے پر حنا کی لاش کے ٹکڑے کر کے نہر میں پھینک دئے۔ حنا کے نندوئی نے پولیس کو دئے گئے بیان میں بتایا کہ ہم نے سب سے پہلے حنا کا گلہ دبا کر اس مارا، جس کے بعد اسے اُٹھا کر باتھ روم لے گئے ۔

باتھ روم لے کر حنا کی لاش کے ٹکڑے کیے اور پھر ان ٹکڑوں کو نہر میں پھینک دیا۔ حنا کی نند نے بھی اپنے جُرم کا اعتراف کرتے ہوئے کہا کہ ہم نے یہ سب پیسوں کی لالچ میں کیا ہے۔ پولیس نے اعتراف جُرم کے بعد ملزمان کو عدالت میں پیش کر کے ان کا تین روزہ جسمانی ریمانڈ حاصل کر لیا۔ حنا کے والد نے مطالبہ کیا کہ میری بیٹی کے قاتلوں کو سخت سے سخت سزا دی جائے۔