جماعت اسلامی سب کا احتساب چاہتی ہے، عدالت نے ایک خاندان کو مجرم ٹھہرا کر باقی مگر مچھوں کو چھوڑ دیا ہے،سینیٹر مشتاق احمد

ہفتہ مئی 21:48

پشاور(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 19 مئی2018ء) امیر جماعت اسلامی خیبر پختونخوا سینیٹر مشتاق احمد خان نے کہا ہے کہ جماعت اسلامی سب کا احتساب چاہتی ہے، عدالت نے ایک خاندان کو مجرم ٹھہرا کر باقی مگر مچھوں کو چھوڑ دیا ہے، پانامہ لیکس میں شامل باقی 436افراد کو بھی سزا ملنی چاہئے۔ قوم کی دولت لوٹنے والوں کو کسی قسم کی ریلیف نہیں ملنی چاہئے، پانامہ ، لندن اور دبئی لیکس میں شامل افراد کرپشن کے گاڈ فادر ہیں، جماعت اسلامی اقتدار میں آئی تو قوم کی لوٹی دولت واپس لائیں گے۔

انہوں نے ہفتے کو المرکزالاسلامی سے جاری بیان میں کہا کہ پاکستان میں معمولی چوری کرنے والوں کو تو کئی کئی سال کی سزائیں سنائی جاتی ہیں لیکن ملکی خزانہ لوٹنے اور دولت باہر منتقل کرنے والے سرٹیفائیڈ چوروں کو پروٹوکول اور ایمنسٹی سکیموں کے ذریعے ساز با ز کرکے کالا دھن سفید کرنے کی کھلی چھوٹ دی جاتی ہے، سپریم کورٹ میں لٹیروں کے احتساب کا عمل سست روی کا شکار ہے جس سے لوگوں کی امیدیں دم توڑ رہی ہیں، چیف جسٹس سے اپیل ہے کہ کرپشن میں ملوث تمام افراد کو عدالت کے کٹہرے میں لائیں ، ان سے قوم کی لوٹی دولت نکلوائیں اور انہیں سخت سزا دیں۔

(جاری ہے)

انہوں نے کہا کہ فاٹا اصلاحات بل کی منظوری میں بے جا تاخیر تشویشناک ہے،حکومت جلد از جلد فاٹا کو خیبر پختونخوا میں ضم کرے اور صوبائی اسمبلی میں فاٹا کو نمائندگی دے،اصلاحات اور انضمام میں تاخیر کسی صورت قبول نہیں۔ انہوں نے کہا کہ عام انتخابات کے انعقاد میں تاخیر نہیں ہونی چاہئے، الیکشن کمیشن جلد انتخابی شیڈول اور انتخابات کے انعقاد کی تاریخ کا اعلان کریں،انتخابی شیڈول اور انتخابات کی تاریخ میں تاخیر سے شکوک و شبہات جنم لے رہے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ جب تک کرپشن میں ملوث ہر فرد کا احتساب اور اس کو سزا نہیں دی جاتی ملک ترقی نہیں کرسکتا۔ پاکستان کی ترقی کا راز بے لاگ اور کڑے احتساب میں ہے، عوام انتخابات میں کرپٹ اور سرمایہ دار طبقے کو مسترد کریں اور اپنا ووٹ دیانتدار قیادت کو دیں ۔ دیانتدار قیادت ملک کو مسائل اور بحرانوں سے نکال سکتی ہے۔ جماعت اسلامی کے پاس ایسی قیادت موجود ہے جو ملک کو ترقی و خوشحالی کے راستے پر گامزن کرنے کی صلاحیت رکھتی ہے۔