ریاض پولیس نے بجلی کی تاریں،بیٹریاں ودیگر اشیاء چرانے والا 14 رکنی ایشیائی گروہ گرفتار کر لیا

اتوار مئی 09:20

ریاض ۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 20 مئی2018ء) سعودی عرب کے شہر ریاض کی ریجنل پولیس کا کہنا ہے کہ بجلی کی تاریں،بیٹریاں اور دیگر اشیاء چرانے والے 14 رکنی ایشیائی گروہ کو گرفتار کر لیا گیا ہے، ملزمان نے ابتدائی تحقیقات میں 49 و ارداتوں کا اعتراف کیا۔ مقامی ذرائع ابلاغ کے مطابق پولیس ترجمان نے بتایا کہ پولیس کو اطلاع ملی تھی کہ ہائی وے پر بجلی کے ٹرانسفارمر روم میں موجود بیٹری ، کیبل اور تانبے کے فیوز چوری ہو رہے ہیں۔

بجلی کمپنی کے کنٹریکٹر نے پولیس میں رپورٹ درج کروائی تھی کہ ہائی و ے پر بجلی کی روانی بحال رکھنے کیلئے مخصوص مقامات پر ہنگامی ٹرانسفارمر یونٹس نصب کئے جاتے ہیں جن میں جنریٹر ز ، پلانٹ کو چلانے والی بیٹریاں اور تابنے کے فیوز کے علاوہ کیبل اسٹور کی جاتی ہیں تاکہ کسی بھی ہنگامی صورتحال میں فوری پر بجلی کے نقص کو دور کیا جاسکے، کچھ عرصے سے ہائی ویز پر بنے ان یونٹس میں سے سامان چوری ہو رہا ہے جہاں نامعلو م چور پاور سٹیشن کا تالا توڑ کر وہاں رکھا ہوا احتیاطی سامان چرا لے جاتے ہیں۔

(جاری ہے)

رپورٹ درج ہونے کے بعد پولیس نے نامعلوم ملزموں کی گرفتاری کیلئے منظم حکمت عملی مرتب کرتے ہوئے ان مقامات کی مسلسل نگرانی شروع کر دی جہاں متعدد بار وارداتیں ہوئی تھیں۔ ریجنل ترجمان کا کہنا تھا کہ پولیس ٹیم کو جلد ہی کامیابی مل گئی۔ ملزمان نگرانی سے بے خبر حسب معمول واردات کرنے آئے اور گرفتار کرلیے گئے جنہوںنے نہ صرف اپنے اڈے کا پتا بھی بتایا اور گروہ کے دیگر ارکان کی بھی نشاندہی کی۔

ملزمان کے قبضے سے مسروقہ سامان برآمد کرلیا گیا۔ ابتدائی بیان میں ملزمان نے انکشاف کیا کہ انہو ںنے اب تک 1142 بیٹریاں ، 13 جنریٹر اور 24 تابنے کے فیوز چوری کیے ہیں۔ مسروقہ سامان کی مالیت 2 لاکھ 88 ہزار ریا ل سے زائد بتائی جاتی ہے۔۔پولیس ترجمان نے مزید بتایا کہ ملزمان کی نشاندہی پر اس گودام پر بھی چھاپا مارا گیا جہاں انہوںنے اپنا اڈا قائم کیا ہوا تھا۔ملزمان مارکیٹ سے زائدالمیعاد اشیائے خورونوش کے ڈبے لے آتے تھے بعدازاں وہ ان پر تاریخ تبدیل کرکے فروخت کیا کرتے تھے۔ گودام سے بڑی مقدار میں غیر معیار ی زائدالمیعاد اشیائے خورونوش کے پیکٹس بھی برآمد ہوئے۔