جدید ٹیکنالوجی سے استفادہ اور کاشتکاری کو فروغ دے کر پھلوں کی برآمدات سے قیمتی زرمبادلہ کاحصول ممکن بنایاجاسکتاہے، ماہرین زراعت

اتوار مئی 13:30

فیصل آباد۔20 مئی(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 20 مئی2018ء) ماہرین زراعت نے کہاہے کہ کولڈ سٹوریج کی سہولیات میں اضافہ اور پوسٹ ہارویسٹ ٹیکنالوجی کو فروغ دے کر امرود ، کھجور ، تربوز ، انار ، سٹرابری کی برآمدات میں خاطر خواہ اضافہ کیاجاسکتاہے۔ انہوںنے بتایاکہ پاکستان کو اللہ تعالیٰ نے دنیا کے سب سے بہترین موسموں اور مثالی زرعی زمین سے نوازا ہے جبکہ قدرتی ماحول اورزرخیز زمینوں کے سبب ملک میں امرود ، کھجور ، تربوز ، انار ، سٹرابری کی شاندار پیداوار کے حصول کے روشن امکانات موجود ہیں ۔

(جاری ہے)

انہوںنے کہاکہ معمولی سی محنت ، جدید ٹیکنالوجی سے استفادہ اور کاشتکاری کو فروغ دے کر ان پھلوں کی برآمدات سے قیمتی زرمبادلہ کاحصول ممکن بنایاجاسکتاہے۔ انہوںنے کہاکہ کولڈ سٹوریج کی سہولتوں میں اضافہ اور پوسٹ ہارویسٹ ٹیکنالوجی عام کرکے کاشتکاروں و باغبانوں کے مالی وسائل کئی گنا بڑھائے جا سکتے ہیں ۔ انہوںنے اس امر پر انتہائی تشویش کا اظہار کیاکہ ہر سال ملک میں اربوں روپے کے پھل ضائع ہو جاتے ہیں ۔ انہوںنے کہاکہ جب تک چھوٹے کاشتکاروںکو جدید ٹیکنالوجی سے روشناس نہیں کروایا جاتا اس وقت تک ملکی معیشت کااستحکام ناممکن ہے۔