متحدہ عرب امارات میں 5پاکستانیوں کو سخت سزا سنادی گئی

جسمانی معذور افراد سے زبردستی بھیک منگوانے پر 5 پاکستانی شہریوں کو ایک سال قید کی سزا پاکستانی افراد جسمانی معذور افراد سے زبردستی متحدہ عرب امارات میں بھیک منگواتے تھے

Sumaira Faqir Hussain سمیرا فقیرحسین منگل مئی 15:37

متحدہ عرب امارات میں 5پاکستانیوں کو سخت سزا سنادی گئی
متحدہ عرب امارات (اُردو پوائنٹ تازہ ترین اخبار۔ 22 مئی 2018ء) : بھیک منگوانے کے لیے جسمانی معذور افراد کو متحدہ عرب امارات لانے پر 5 پاکستانی شہریوں کو ایک سال قید کی سزا سنا دی گئی۔ میڈیا رپورٹ کے مطابق پاکستانی شہری بھیک منگوانے کے لیے 14 جسمانی معذور افراد کو متحدہ عرب امارات لے کر آئے۔ ہیومن ٹریفکنگ کے جُرم میں پاکستانی شہریوں کو ایک سال قید اور ایک لاکھ درہم جُرمانے کی سزا سنائی گئی۔

شارجہ کی کرمنل کورٹ کے مطابق معذور افراد کو بد تر حالات میں متحدہ عرب امارات کے ایک گھر میں رکھا گیا تھا۔ مدعی کے وکیل نے پراسیکیوشن کے الزامات کو مسترد کرتے ہوئے عدالت کو بتایا کہ معذور افراد کو زبردستی متحدہ عرب امارات نہیں لایا گیا نہ ہی ان کو ہیومن ٹریفکنگ کے ذریعے یہاں لایا گیا، وکلا کے مطابق بھکاریوں کو اچھی طرح اس بات کا علم تھا کہ انہیں بھیک منگوانے کے لیے متحدہ عرب امارات لے جایا جا رہا ہے۔

(جاری ہے)

پاکستانی شہریوں پر 14 سال کی عمر تک کے نوجوانوں کو رمضان المبارک میں وزٹ ویزا پر متحدہ عرب امارات لانے کا الزام ہے۔ عدالت نے 13 متاثرہ افراد کا بیان سنا جبکہ 14 سالہ لڑکا اس گروہ کے تشدد کے باعث نفسیاتی علاج کے لیے اسپتال میں موجود ہے۔ متاثرہ افراد میں سے 9 کی عمر 20 سال ، اور چار افراد کی عمر 40 سال سے زائد ہے اور یہ لوگ صرف اپنی علاقائی زبان میں ہی بات چیت کر سکتے ہیں، ان کو لوگوں کی توجہ اور ہمدردی حاصل کرنے کی پوری ٹریننگ دی گئی، متاثرہ افراد نے بتایا کہ ملزمان نے انہیں صنعتی علاقہ میں ایک جگہ رکھا تھا۔

جج محمود ابوبکر نے اس کیس کی سماعت کی اور دوران سماعت متاثرہ افراد نے بتایا کہ پولیس نے انہیں گرفتار کیا ، انہوں نے بتاہا کہ انہیں دیگر 35 بھکاریوں کے ساتھ پولیس اسٹیشن لایا گیا، تفتیش کے دوران پولیس کو علم ہوا کہ انہیں 5 پاکستانی شہری ہیومن ٹریفکنگ کے ذریعے متحدہ عرب امارات لائے۔ پولیس اور پراسیکیوشن کی تفتیش کے دوران ملزمان نے جسمانی طور پر معذور افراد کو متحدہ عرب امارات میں بھیک منگوانے کے لیے پاکستان سے لانے کا اعتراف کیا۔