پاکستان تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان کا سو دن کا ایجنڈا حقیقت پر مبنی نہیں ہے، اس تصوراتی ایجنڈا پر مکمل عملدرآمد کیلئے اضافی 8 کھرب روپے کی ضرورت ہوگی،وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل پر یس بریفنگ

منگل مئی 19:10

اسلام آباد ۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 22 مئی2018ء) وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل نے کہا ہے کہ پاکستان تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان کا سو دن کا ایجنڈا حقیقت پر مبنی نہیں ہے۔ اس سے حکومت پر اضافی مالیاتی بوجھ بڑے گا۔ یہ تصوراتی ایجنڈا ہے جس کیلئے اضافی سالانہ 00 16 ارب روپے کی ضرورت ہے۔ منگل کو یہاں پریس بریفنگ کے دوران انہوں نے بتایا کہ پی ٹی آئی نے جو پلان دیا ہے اس کیلئے انتظامی اخراجات کے طور پر نئے صوبے بنانے کیلئے اور غربت کے خاتمے کیلئے 120 ارب روپے کی ضرورت ہوگی جو کہ ایک مشکل اور حقیقت کے منافی بات ہے۔

انتظامی اخراجات کیلئے ہر سال پچاس ارب روپے کی اضافی ضرورت ہوگی۔ انہوں نے کہا کہ ایک کروڑ ملازمتیں دینے کیلئے بھی سالانہ بھاری فنڈز کی ضرورت پڑ سکتی ہے۔

(جاری ہے)

جس سے قومی خزانے پر مالیاتی بوجھ بڑے گا۔ انہوں نے بتایا کہ ایک کروڑ ملازمتوں کی فراہمی کیلئے 140 ارب روپے کی سالانہ ضرورت ہوگی۔ انہوں نے کہا کہ پی ٹی آٰئی نے صنعتی شعبہ کیلئے جن مراعات کی بات کی ہے اور بجلی کی لاگت میں کمی کا دعوی کیا ہے اس کیلئے بالترتیب 55 اور 100 ارب روپے کی ضرورت ہوگی۔

انہوں نے کہا کہ پی ٹی آئی کی طرف سے جو پچاس لاکھ گھروں کی فراہمی کا دعویٰ کیا گیا ہے اس کیلئے بھی بالترتیب 100 اور 160 ارب روپے کی ضرورت ہے۔ یہ اعلانات حقیقت پر مبنی دکھائی نہیں دیتے۔ انہوں نے بتایا کہ پی ٹی آئی نے ڈیزل پر ٹیکس میں کمی کا جو اعلان کیا ہے اس کیلئے بھی سالانہ 80 اور 40 ارب روپے کی ضرورت ہوگی۔ انہوں نے مزید بتایا کہ ملک بھر میں پینے کے صاف پانی کی فراہمی کیلئے 240 ارب روپے کی ضرورت ہوگی۔ جبکہ دس ارب درخت لگانے کیلئے بھی 25 ارب روپے کی ضرورت ہوگی۔ انہوں نے کہا کہ پی ٹی آئی نے 100 دن کا جو ایجنڈا پیش کیا ہے اس پر مکمل عملدرآمد کیلئے اضافی 8 کھرب روپے کی ضرورت ہوگی۔ جس سے آئندہ پانچ سال میں قرض کی شرح جی ڈی پی کے 4 سے 8 فیصد تک پہنچنے کا خدشہ ہے۔