موٹریں خراب ہونے کا بہانہ ،پبلک ہیلتھ نے رمضان المبارک میں پانی بند کر کے ہزاروں افراد کو مشکلات مین مبتلا کر دیا

مساجد اور گھروں میں وضوکیلئے بھی پانی ناپید ‘ذمہ داران خاموش تماشائی کا کردار ادا کرنے لگے

منگل مئی 21:39

مظفرآباد(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 22 مئی2018ء) موٹریں خراب ہونے کا بہانہ ،پبلک ہیلتھ نے رمضان المبارک میں پانی بند کر کے ہزاروں افراد کو مشکلات مین مبتلا کر دیا ۔مساجد اور گھروں میں وضوکیلئے بھی پانی ناپید ۔ذمہ داران خاموش تماشائی کا کردار ادا کرنے لگے۔تفصیلات کے مطابق محکمہ پبلک ہیلتھ گڑھی دوپٹہ نے حکومی ،گڈ گورننس کی مثال قائم کرتے ہوئے موٹریں خراب ہونے کا بہانہ بنا کر قصبہ ہٹیاں دوپٹہ ،گڑھی دوپٹہ ،بڈھیارہ اور گردونواح کے ہزاروں افراد کو پانی سے محروم کر دیا ہے ۔

چار روز سے پانی بند ہونے کی وجہ سے مساجد اور گھروں میں وضو تک کیلئے پانی نہیں جس کی وجہ سے عوام کو شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے ۔پبلک ہیلتھ کے اہلکاران پندرہ روز کے بعد موٹریں خراب ہونے کا بہانہ بنا کر پانی بند کر دیتے ہیں ۔

(جاری ہے)

موٹریں مرمت کروانے کے نام پر فنڈز ہضم کیے جاتے ہیں ۔گڈ گورننس کی اس سے بڑی اور کیا مثال ہو سکتی ہے کہ پبلک ہیلتھ نے رمضان المبارک میں دریا کا آلودہ پانی بھی بند کر کے عوام کو عذاب میں مبتلا کر دیا ہے ۔

گڑھی دوپٹہ کے عوامی ،سیاسی ،سماجی حلقوں نے ذمہ داران سے فوری نوٹس لینے کا پرزور مطالبہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ اگر دو روز کے اندر پانی بحال نہ ہوا تو گڑھی دوپٹہ کے ہزاروں افراد راست اقدام پر مجبور ہو جائیں گے جس کی تمام تر ذمہ داری محکمہ پبلک ہیلتھ پر عائد ہوگی ۔

متعلقہ عنوان :