وزیراعظم شاہد خاقان عباسی کی زیر صدارت وفاقی کابینہ نے اشتر اوصاف کی بطور جج لاہور بنکنگ کورٹ تعیناتی ، کراچی کی خصوصی عدالت کے جج عبید خان کی مدت ملازمت میں توسیع اور جسٹس(ر) شاہد سعید کی بطور چیئرمین کاپی رائٹ بورڈ تعیناتی کی منظوری دے دی

ای سی سی کے 8اور11مئی کے فیصلوں اور کابینہ کمیٹی برائے توانائی 12اکتوبر2017کے فیصلوں کی بھی توثیق

منگل مئی 22:32

وزیراعظم شاہد خاقان عباسی کی زیر صدارت وفاقی کابینہ نے اشتر اوصاف کی ..
اسلام آباد(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 22 مئی2018ء) وزیراعظم شاہد خاقان عباسی کی زیر صدارت وفاقی کابینہ نے اقتصادی رابطہ کمیٹی کے 8اور11مئی اجلاس کے فیصلوں اور کابینہ کمیٹی برائے توانائی کے 12اکتوبر2017کے فیصلوں کی توثیق کردی ، اشتر اوصاف کی بطور جج لاہور بنکنگ کورٹ تعیناتی ، کراچی کی خصوصی عدالت کے جج عبید خان کی مدت ملازمت میں توسیع اور جسٹس(ر) شاہد سعید کی بطور چیئرمین کاپی رائٹ بورڈ تعیناتی کی منظوری دے دی۔

منگل کو وزیراعظم کی زیر صدارت وفاقی کابینہ کا اجلاس ہوا جس میں کابینہ نے اقتصادی رابطہ کمیٹی کے 8اور11مئی اجلاس کے فیصلوں وار کابینی کمیٹی برائے توانائی 12اکتوبر2017کے فیصلوں کی توثیق کردی گئی ۔ پاکستان اور بوسنیا کے درمیان دفاعی صنعت میں تعاون کے معاہدے کی توثیق کر دی گئی ۔

(جاری ہے)

کابینہ نے سرمایہ کاری بورڈ پاکستان اور فرانس کے درمیان کاروبار کے ایم او یو پر دستخط، پاکستان اور کرغزستان میں اصلاحاتی تعلیم کے شعبے میں تعاون کی یاداشت کی منظوری دے دی ۔

وفاقی کابینہ نے اشتر اوصاف کی بطور جج لاہور بنکنگ کورٹ تعیناتی کی منظوری ، کراچی کی خصوصی عدالت کے جج عبید خان کی مدت ملازمت میں توسیع کی منظوری اور جسٹس(ر) شاہد سعید کی بطور چیئرمین کاپی رائٹ بورڈ تعیناتی کی منظوری دے دی۔وفاقی کابینہ نے پی این ایس سی کے بورڈ کی دوبارہ تشکیل نو کی منظوری بھی دیدی ۔ کابینہ نے پاکستان نیشنل شپنگ کارپوریشن کے چیئرمین کی تعیناتی ، دوائیوںکی زیادہ سے زیادہ ریٹیل قیمتوں کی منظوری ، اوگرا گیس قوانین 2018کی منظوری اور نیشنل ٹیکنیکل اینڈ ووکیشنل ایجوکیشن تربیتی پالیسی کی منظودی دیدی ۔

فاٹا کے انضمام کیلئے آئینی ترمیم کے مسودے کو پارلیمنٹ میں پیش کرنے کی منظوری دیدی گئی ۔ کابینہ اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ گلگت بلتستان کونسل وفاق کیلئے ایڈوائزری باڈی کے طور پر برقرار رہے گی ۔