یورپ دباؤ ڈالے گا تو اپنی خارجہ پالیسی پر نظر ثانی کریں گے، ایران

بدھ مئی 13:34

تہران ۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 23 مئی2018ء) ایران کی اعلی قومی سلامتی کونسل کے سیکرٹری علی شمخانی نے کہا ہے کہ اگر یہ بات ثابت ہوجاتی ہے کہ یورپی ممالک ایٹمی معاہدے کے تعلق سے اپنے وعدوں پر عمل نہیں کررہے ہیں یا ایٹمی معاہدے سے امریکا کے نکلنے کو بہانہ بناکر دیگر معاملات میں ایران پر دباؤ ڈالنے کی کوشش کررہے ہیں تو ایران اپنی موجودہ خارجہ پالیسی پر نظرثانی کرے گا۔

(جاری ہے)

ایرانی خبر رساں ادارے کے مطابق علی شمخانی نے کہا ہے کہ امریکی صدر ٹرمپ نے اس تصور کے ساتھ ایٹمی معاہدے سے علیحدہ ہونے کا اعلان کیا ہے کہ وہ یورپ پر اپنی شرطیں مسلط اور دنیا کے مختلف ملکوں نیز امریکی عوام کو اپنے فیصلے کا حامی بنا لیں گے جبکہ نہ صرف یورپی ممالک یا دنیا کے دیگر ممالک امریکا کے ساتھ نہیں ہوئے بلکہ سروے نتائج کے مطابق امریکا کے دو تہائی عوام نے بھی امریکی صدر ٹرمپ کے فیصلے پر اپنی مخالفت کا اظہار کیا ہے۔انھوں نے کہا کہ ایران کے اقتدار و عظمت کو محدود کرنے کی امریکی کوشش کامیاب نہیں ہو گی۔انہوں نے کہا کہ ایران کے پرامن ایٹمی پروگرام کے بارے میں امریکاکچھ کہنے کا حق نہیں رکھتا۔