نگران وزیر اعظم کے نام پر ڈیڈ لاک سے افواہوں کو تقویت اور ملک میں عدم استحکام پیداہوگا‘میاں مقصود احمد

بدھ مئی 17:44

لاہور (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 23 مئی2018ء) صدر متحدہ مجلس عمل پنجاب اورامیرجماعت اسلامی پنجاب میاں مقصود احمدنے کہاہے کہ نگران وزیر اعظم کے نام پر ڈیڈ لاک سے افواہوں کو تقویت ملے گی اور غیر یقینی سیاسی عدم استحکام کی صورتحال پیدا ہوگی ،ایسانگران سیٹ اپ لایاجائے جوہر لحاظ سے غیر جانبدار ہو اور تمام اسٹیک ہولڈرزکے لیے قابل قبول بھی ہو ،جمہوری عمل کے تسلسل کے لیے ضروری ہے کہ مل کر کام کیا جائے بصورت دیگرجمہوریت کوناقابل تلافی نقصان کاخدشہ برقراررہے گا،وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی اور اپوزیشن لیڈر خورشید شاہ کے درمیان ہونے والی پانچویں ملاقات بے نتیجہ ختم ہوناسیاسی سوچ کی ناپختگی کی علامت ہے ،امید ہے کہ حکومت اور اپوزیشن جلد اس معاملے کو اتفاق رائے سے حل کر لیں گے۔

(جاری ہے)

ان خیالات کا اظہار انہوں نے گزشتہ روزمنصورہ میں اہم اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔انہوں نے کہاکہ ایک سوچی سمجھی سازش کے تحت اداروں کے درمیان چپقلش اورخلفشار کوہوادی جارہی ہے۔عدالتی فیصلوں کو ’میں نہ مانوں‘کی پالیسی سے خوفناک تصادم کی راہ ہموار ہوگی جس سے ملک وقوم کو محفوظ رکھنا ممکن نہ ہوگا۔انہوں نے کہاکہ ضرورت اس امر کی ہے کہ حکمت و دانشمندی کے ساتھ فیصلے کیے جائیں،،پاکستان ہے تو سب کچھ ہے اگر ملک نہیں تو کچھ بھی نہیں۔

پاکستان کی عزت،وقار ،سلامتی اور دفاع کودائو پر لگانے والے ملک و قوم کے خیرخواہ نہیں۔ووٹ،ووٹر اورپارلیمنٹ کی توقیر میں اضافہ جمہوریت کا اصل حسن ہے۔انہوں نے کہاکہ انتخابات قریب آتے ساتھ ہی وفاداریاں بدلنے کا سلسلہ بھی شروع ہوچکا ہے۔جو لوگ اپنی پارٹیوں اور نظریے سے وفادار نہیں وہ ملک وقوم کے ساتھ کیسے مخلص ہوسکتے ہیں ۔ملک اس وقت نازک صورتحال سے دوچار ہے۔

تمام ترخدشات کے باوجود جمہوریت کوپنپنے کاموقع ملنا چاہئے۔کچھ لوگوں کاایجنڈاہے کہ الیکشن ملتوی ہوجائیں لیکن وہ اپنے مذموم عزائم میں کامیاب نہیں ہوں گے۔حقیقت یہ ہے کہ ایسے عناصر ذاتی مفادات کے حصول کے لیے جمہوریت کوپٹری سے اتارناچاہتے ہیں۔میاں مقصوداحمد نے مزیدکہاکہ 2018کے عام انتخابات میں عوام متحدہ مجلس عمل کی دیانتدار،باکردار اور جراتمند قیادت کو کامیاب کرائیں۔عوام کو درپیش مسائل اور مشکلات کا حل متحدہ مجلس عمل کے پاس ہے۔سیکولر اور لبرلزجماعتوں نے ملک وقوم کو مسائل کے سواکچھ نہیں دیا،اب وقت آگیا ہے کہ ان سے نجات حاصل کی جائے۔